( غیــر مطبــوعــہ ) نہ شام بھر تھی ‘ نہ رات بھر…

( غیــر مطبــوعــہ )

نہ شام بھر تھی ‘ نہ رات بھر تھی
وہ اک کسک تو حیات بھر تھی

افق افق تک پہنچ چکی ہے
وہ اک اُداسی کہ ہات بھر تھی

کہاں تلک دُور بھاگتے ہم
وہ اک صدا کائنات بھر تھی

لکھا تھا دیوارِ شہر پر یہ :
کہ عافیت جنگلات بھر تھی

ہر ایک کوشش تھی رایگاں سی
ہر ایک بازی کہ مات بھر تھی

وہ سارے رستوں سے آشنا تھا
ہر اک ڈَگر حادثات بھر تھی

وہ ایک پہچان کی اذیّت
فقط ہماری ہی ذات بھر تھی

( سـلیـمــان خمــارؔ )


Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

  1. Fazal Gillani کہتے ہیں

    Waaah umdaaaa

تبصرے بند ہیں.

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…