بیاں جب کلیم اپنی حالت کرے ہے غزل کیا پڑھے ہے قیام…

بیاں جب کلیم اپنی حالت کرے ہے
غزل کیا پڑھے ہے قیامت کرے ہے

بھلا آدمی تھا پہ نادان نکلا
سناہے کسی سے محبت کرے ہے

کبھی شاعری اس کو کرنی نہ آتی
اسی بے وفا کی بدولت کرے ہے

چھری پہ چھری کھائے جاہے ہے کب سے
اوراب تک جیے ہے، کرامت کرے ہے

کرے ہے عداوت بھی وہ اس ادا سے
لگے ہے کہ جیسے محبت کرے ہے

یہ فتنے جو ہراک طرف اٹھ رہے ہیں
وہی بیٹھا بیٹھا شرارت کرے ہے

قباایک دن چاک اس کی بھی ہوگی
جنوں کب کسی کی رعایت کرے ہے​

(کلیم عاجز)

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

تبصرے بند ہیں.

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…