کچھ اس کو یاد کروں اس کا انتظار کروں بہت سکوت ہے، …

کچھ اس کو یاد کروں اس کا انتظار کروں
بہت سکوت ہے، میں خود کو بے قرار کروں

بھروں میں رنگ نئے، مضمحل تمنا میں
اداس رات کو آسودہء بہار کروں—-!!!

کچھ اور چاہ بڑھاؤں کچھ اور درد سہوں
جو مجھ سے دور ہے،یوں اس کو ہم کنار کروں

وفا کے نام پہ کیا کیا جفائیں ہوتی رہیں
میں ہر لباسِ جفا آج تار تار کروں

وہ میری راہ میں کانٹے بچھائے، میں لیکن
اسی کو پیار کروں، اس پہ اعتبار کروں

یہ میرے خواب!! مری زندگی کا سرمایہ
نہ کیوں یہ خواب بھی میں آج نذرِ یار کروں

(احمد ہمدانی)
المرسل :-: ابوالحسن علی ندوی(بھٹکلی)

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

  1. Ashraf Khan کہتے ہیں

    سچ مانئے تو آپ کے چہرے پہ دھول ہے
    الزام آئینے پہ سراسر فضول ہے

    شاہد ہمدانی

  2. Nadeem Majeed کہتے ہیں

    Uffffffff kia baat he ji,bohat hi umda….

تبصرے بند ہیں.

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…