ایک زمین مرزا اسد اللہ غالبؔ جوشؔ ملیح آبادی واصف …

ایک زمین
مرزا اسد اللہ غالبؔ
جوشؔ ملیح آبادی
واصف علی واصفؔ
۔۔۔۔۔

بازِیچہء اطفال ہے دُنیا مِرے آگے
ہوتا ہے شب و روز تماشا مِرے آگے

اِک کھیل ہے اورنگِ سلیماں مِرے نزدیک
اِک بات ہے اِعجازِ مسیحا مِرے آگے

جُز نام نہیں صُورتِ عالم مُجھے منظُور
جُز وہم نہیں ہستیِ اشیا مِرے آگے

ہوتا ہے نِہاں گرد میں صحرا مِرے ہوتے
گِھستا ہے جبیں خاک پہ دریا مِرے آگے

مت پُوچھ کہ کیا حال ہے میرا تِرے پیچھے
تُو دیکھ کہ کیا رنگ ہے تیرا مِرے آگے

سچ کہتے ہو خود بین و خود آرا ہُوں نہ کیو ں ہوں
بیٹھا ہے بُتِ آئنہء سِیما مِرے آگے

پِھر دیکھیے اندازِ گُل افشانیِ گُفتار
رکھ دے کوئی پیمانہء صہبا مِرے آگے

نفرت کا گُماں گُزرے ہے مَیں رشک سے گُزرا
کیونکر کہُوں لو نام نہ اُن کا مِرے آگے

اِیماں مُجھے روکے ہے جو کھینچے ہے مُجھے کُفر
کعبہ مرے پیچھے ہے کلیسا مِرے آگے

عاشق ہُوں پہ معشوق فریبی ہے مِرا کام
مجنُوں کو بُرا کہتی ہے لیلیٰ مِرے آگے

خوش ہوتے ہیں پر وصل میں یوں مر نہیں جاتے
آئی شبِ ہِجراں کی تمنّا مِرے آگے

ہے موجزن اِک قُلزُمِ خُوں کاش یہی ہو
آتا ہے ابھی دیکھیے کیا کیا مِرے آگے

گو ہاتھ کو جُنبِش نہیں آنکھوں میں تو دم ہے
رہنے دو ابھی ساغر و مِینا مِرے آگے

ہم پیشہ و ہم مشرب و ہم راز ہے میرا
غالبؔ کو بُرا کیوں کہو اچھّا مِرے آگے۔۔۔!

۔۔۔۔۔

سرشار ہُوں سرشار ہے دُنیا مِرے آگے
کونین ہے اِک لرزشِ صہبا مِرے آگے

ہر نجم ہے اِک عارضِ روشن مِرے نزدیک
ہر ذرّہ ہے اِک دیدہء بِینا مِرے آگے

ہر جام ہے نظارہء کوثر مِرے حق میں
ہر گام ہے گُلگشتِ مُصلّیٰ مِرے آگے

ہر پھُول ہے لعلِ شَکر افشاں کی حِکایت
ہر غُنچہ ہے اِک حرفِ تمنّا مِرے آگے

اِک مُضحَکہ ہے پُرسشِ عُقبیٰ مِرے نزدیک
اِک وہم ہے اندیشہء فردا مِرے آگے

ہوں کِتنی ہی تاریک شبِ زِیست کی راہیں
اِک نُور سا رہتا ہے جھلکتا مِرے آگے

مَیں اور ڈرُوں صَولتِ دُنیائے دَنی سے
خود لرزہ بر اندام ہے دُنیا مِرے آگے

جُھکتا ہے بصد عِجز کلیسا مِرے در پر
آتا ہے لرزتا ہُوا کعبہ مِرے آگے

پیمانے سے جِس وقت چھلک جاتی ہے صہبا
لہراتا ہے اِک حُسن کا دریا مِرے آگے

جب چاند جھمکتا ہے مِرے ساغرِ زر میں
چلتا نہیں خورشید کا دعویٰ مِرے آگے

جب جھُوم کے مِینا کو اُٹھاتا ہُوں گھٹا میں
ہِلتا ہے سر گُنبدِ مِینا مِرے آگے

آتی ہے دُلہن بن کے مشِیّت کی جلُو میں
آوارگیِ آدم و حوّا مِرے آگے

پیمانے پہ جِس وقت جھکاتا ہُوں صُراحی
جُھکتا ہے سر عالمِ بالا مِرے آگے

پہلُو میں ہے اِک زُہرہ جبِیں ہاتھ میں ساغر
اِس وقت نہ دُنیا ہے نہ عُقبیٰ مِرے آگے

جوشؔ اُٹھتی ہے دُشمن کی نظر جب مِری جانِب
کُھلتا ہے محبّت کا درِیچا مِرے آگے۔۔۔!

۔۔۔۔۔

​ہر ذرّہ ہے اِک وُسعتِ صحرا مِرے آگے
ہر قطرہ ہے اِک موجہء دریا مِرے آگے

اِک نعرہ لگا دُوں کبھی مستی میں سرِ دار
کعبہ نہ بنے کیسے کلیسا مِرے آگے​

وہ خاک نشیں ہُوں کہ میری زد میں جہاں ہے
بل کھاتی ہے کیا موجِ ثُریّا مِرے آگے​

مَیں ہست میں ہُوں نیست کا پیغامِ مُجسّم
انگُشتِ بدنداں ہے مسیحا مِرے آگے​

مَیں جوش میں آیا تو یہی قُلزُمِ ہستی
یوں سِمٹا کہ جیسے کوئی قطرہ مِرے آگے​

لے آیا ہُوں اِفلاک سے مِلّت کا مُقدّر
کیا کیجیے مقدُور کا شِکوہ مِرے آگے​

اُستادِ زماں فخرِ بیاں کی ہے توجہ
غالبؔ کی زمیں کب ہوئی عنقا مِرے آگے​

واصفؔ ہے میرا نام مگر راز ہُوں گہرا
ذرّے نے جِگر چیر کے رکھّا مِرے آگے​۔۔۔!

۔۔۔۔۔

مُختلِف زمین مُشترک قافیہ ردیف

باقی جو دُوئ کا نہیں پردہ مِرے آگے
یکساں ہُوۓ کعبہ و کلیسا مِرے آگے

تاب رُخِ دِلدار نہ تھی طُور کو دیکھا
کیا فخر کریں حضرتِ موسیٰ مِرے آگے

وہ نالہء پُردرد سے در پر نِکل آیا
قُدرت کا ہُوا آج تماشا مِرے آگے

ایماں کی تمنّا ہے فِدا تُجھ پہ کرُوں مَیں
لِلّہ نِکل او بُتِ ترسا مِرے آگے

ہے زِندگی اپنی بُتِ جاں بخش پہ موقُوف
ہے بازیِ طِفلاں قُمِ عیسیٰ مِرے آگے

پروانے کی ہِمّت ہے نہ پِھر ہجر کو دیکھا
بُلبُل تُو نہ کر عِشق کا دعویٰ مِرے آگے

معشُوق کو مَحبُوس کِیا واۓ محبّت
کیا عِشق کا لے نام زلیخا مِرے آگے

ہے جُزو سے حاصل مُجھے اب کُل کا تماشا
قطرہ کو جو دیکُھوں تو ہے دریا مِرے آگے

مَیں رِندِ سبُوکش ہُوں نہیں زُہد سے کُچھ کام
ہاں چاہیے اِک ساغر و مینا مِرے آگے

کیفیّتِ قاروں سے جو واقِف ہُوں مَیں بہرامؔ
کُچھ مال نہیں دولتِ دُنیا مِرے آگے۔۔۔!

بہرامؔ جی جاما


Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

  1. Riyaz Hussain کہتے ہیں

    قرار دل کا یہ کاہے کو ڈھنگ تھا آگے
    ہمارے چہرے کے اوپر بھی رنگ تھا آگے

    اٹھائیں تیرے لیے بد زبانیاں ان کی
    جنھوں کی ہم کو خوشامد سے ننگ تھا آگے

    ہماری آہوں سے سینے پہ ہو گیا بازار
    ہر ایک زخم کا کوچہ جو تنگ تھا آگے

    رہا تھا شمع سے مجلس میں دوش کتنا فرق
    کہ جل بجھے تھے یہ ہم پر پتنگ تھا آگے

    کیا خراب تغافل نے اس کے ورنہ میرؔ
    ہر ایک بات پہ دشنام و سنگ تھا آگے……

  2. Syeda Jasmin Ahmed کہتے ہیں

    یاس یگانہ چنگیزی نے بھی اس زمین میں لکھا ہے کہ۔۔۔۔۔۔۔
    اک طفل دبستاں ہے فلاطوں مرے آگے
    کیا زور ہے کہ چوں کرے ارسطو مرے آگے
    مجرے کومرے آئے ہیں پیران کلیساں
    مرغے کی طرح کرتے ہیں غوں غوں مرے آگے

  3. Hasnan Shah کہتے ہیں

    مقابلے کی بات نہیں۔۔ بلکہ ہر کسی کے تخیل کی پرواز کیسی ہے۔۔۔

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…