سبھی چہروں میں اک چہرے کو اکثر ڈھونڈتے رہنا ستاروں…

سبھی چہروں میں اک چہرے کو اکثر ڈھونڈتے رہنا
ستاروں سے کبھی بچھڑے ہوؤں کا پوچھتے رہنا

نجانے کیا ہوا جاناں جو دل نے شغل اپنایا
بہت سنسان گلیوں میں یوں شب بھر گھومتے رہنا

کبھی تتلی پکڑ لینا ،، کبھی خوشبو سے چِڑ جانا
کبھی بچوں کی طرح جگنوؤں سے کھیلتے رہنا

بہت مایوس ہو جانا ،، بہت چُپ چاپ سا پھِرنا
کبھی بے بات ، بے وجہ بہت ہی بولتے رہنا

کبھی لوگوں سے لڑ پڑنا، کبھی لوگوں سے ڈر جانا
کبھی گھنٹوں بلا مقصد فضا میں گھورتے رہنا

تمہارے بعد تو شاہد یہ عادت ہی بنا لی ہے
گھنی تاریک راتوں میں یوں پہروں جاگتے رہنا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شاہد راؤ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
#Mirza

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…