ترے مکھ نے چھپایا ہے صنم اس چار اشیا کو قمر کو، مش…

ترے مکھ نے چھپایا ہے صنم اس چار اشیا کو
قمر کو، مشتری کو، شمس کو، خورشیدِ اعلا کو

خرامش تیرے قامت نے، کیا خم پشت خجلت سیں
شجر کو، سرو کو، عرعر کو اور شمشادِ برپا کو

کیا شہدِ دو لعلِ لب ترے، کم لذت اے جاناں!
شکر کو، نیشکر کو، قند کو، مصری کو، حلوا کو

پری رخسار نے تیرے کیا شرمندہ در گلشن
سمن کو، یاسمن کو، لالہ کو اور پھولِ رعنا کو

دُرِ دندان و لب تیرے کیا کم قیمت اے مہ رو!
گہر کو، لعل کو، یاقوت کو، لولوئے لالا کو

دیا نشّہ ترے لب کے زلال اے رشکِ مہ رُویاں
سبو کو، شیشے کو، ساغر کو، لعلِ جامِ مینا کو

حَسَن روشن کیا ہے وصف سیں تیرا بدن سارا
دہن کو، سینے کو، جاں کو، جگر کو، چشمِ بینا کو

(محمد حسن براہوئی)
سالِ وفات: ۱۸۵۵ء

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…