ہر چہرے میں آتی ہے نظر یار کی صُورت​ احباب کی صُور…


ہر چہرے میں آتی ہے نظر یار کی صُورت​
احباب کی صُورت ہو کہ اغیار کی صُورت​

سینے میں اگر سوز سلامت ہو تو خود ہی​
اشعار میں ڈھل جاتی ہے افکار کی صُورت​

جس آنکھ نے دیکھا تُجھے اُس آنکھ کو دیکُھوں​
ہے اِس کے سِوا کیا تِرے دیدار کی صُورت​

پہچان لِیا تُجھ کو تِری شیشہ گری سے​
آتی ہے نظر فن ہی سے فنکار کی صُورت​

اشکوں نے بیاں کر ہی دیا رازِ تمنّا
ہم سوچ رہے تھے ابھی اِظہار کی صُورت​

اِس خاک میں پوشیدہ ہیں ہر رنگ کے خاکے​
مٹی سے نِکلتے ہیں جو گُلزار کی صُورت​

دِل ہاتھ پہ رکھا ہے کوئی ہے جو خریدے
دیکُھوں تو ذرا مَیں بھی خریدار کی صُورت​

صُورت مِری آنکھوں میں سمائے گی نہ کوئی​
نظروں میں بسی رہتی ہے سرکار کی صُورت​

واصف کو سرِ دار پُکارا ہے کِسی نے​
اِنکار کی صُورت ہے نہ اِقرار کی صُورت​۔۔۔!

کلام حضرت واصف علی واصفؔ
آواز اُستاد نصرت فتح علیخاں

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…