"تمہیں خیال نہیں کس طرح بتائیں تمہیں کہ سانس چلتی …

"تمہیں خیال نہیں کس طرح بتائیں تمہیں
کہ سانس چلتی ہے، لیکن اداس چلتی ہے”
3 دسمبر: یومِ وفات جناب محبوب خزاںؔ
(ولادت: 1 جولائی 1930ء – وفات: 3 دسمبر 2013ء)
محبوب خزاںؔ کا اصل نام محمد محبوب صدیقی تھا۔ وہ اُتر پردیش کے ضلع بلیہ کے ایک موضع چندا دائر کے ایک معزز گھرانے میں یکم جولائی 1930ء کو پیدا ہوئے۔ 12 برس کی عمر میں اُن کے والد انتقال کر گئے اور اُن کی تعلیم و تربیت بڑے بھائی محمد ایوب صدیقی نے کی۔ اُنھوں نے 1948 میں الٰہ آباد یونی ورسٹی سے گریجویشن کیا اور پاکستان آگئے، یہاں سے اُنھوں نے سول سپیریئر سروسز (سی ایس ایس) کیا۔اُن کی پہلی تقرری شہر ادب و ثقافت ،لاہور میں اسسٹنٹ اکاؤنٹنٹ جنرل کی حیثیت سے ہوئی ،پھر ڈھاکہ بھیج دیئے گئے جب کہ تہران میں قیام کے دوران معروف شاعر ن م راشد سے اُن کی خاصی قربت رہی۔ بعد میں وہ بلاد العروس کراچی میں اے جی پی آر رہے اور یہیں سے ریٹائر ہوئے۔ اُن کا پہلااور اکیلا شعری مجموعہ ’’اکیلی بستیاں‘ ‘قمر جمیل کے’’خواب نما‘‘ اور محب عارفی کے ’’چھلنی کی پیاس‘‘ کے ساتھ شائع ہوا۔ غالباً یہ مجموعہ 1963 ء میں کراچی سے شائع ہوا تھا۔ محبوب خزاں ؔکے شعری مجموعہ ’’اکیلی بستیاں‘‘ کی اسی عنوان سے شہرۂ آفاق نظم اُردو شاعری میں ہمیشہ زندہ رہنے والی ایک نظم ہے۔ اس نظم کاایک الگ ڈھنگ اوراس کا اُسلوب سحر طاری کر دینے والاہے۔ بقول اظہار الحق ’’ حسن اور عشق سے لے کر معاشرت، رواج اور معیشت تک، ہر موضوع اس چودہ سطروں والی نظم میں دَر آیا ہے۔ غنائیت اس قدر ہے کہ جب بھی پڑھی جائے، نیا لطف آئے‘‘۔ نظم ملاحظہ فرمائیں: بے کس چمبیلی، پھولے اکیلی، آہیں بھری دل جلی بھُوری پہاڑی، خاکی فصلیں، دھانی کبھی سانولی جنگل میں رستے، رستوں میں پتھر، پتھر پہ نیلم پری لہریلی سڑکیں، چلتے مناظر، بکھری ہوئی زندگی بادل، چٹانیں، مخمل کے پردے، پردوں پر لہریں پڑی کاکل پہ کاکل، خیموں پہ خیمے، سلوٹ پہ سلوٹ ہری بستی میں گندی گلیوں کے زینے لڑ کے دھما چوکڑی برسے تو چھاگل ٹھہرے تو ہلچل راہوں میں اک کھلبلی گرتے گھروندے، اُٹھتی اُمنگیں، ہاتھوں میں گاگر بھری کانوں میں بالے، چاندی کے ہالے، پلکیں گھنی کھردری ہڈی پہ چہرے، چہروں میں آنکھیں، آئی جوانی چلی ٹیلوں پہ جوبن، ریوڑ کے ریوڑ، کھیتوں پہ جھالر چڑھی وادی میں بھیگے روڑوں کی بیٹی چشموں کی چمپا کلی سانچے نئے اور باتیں پرانی مٹی کی جادو گری ویسے تو محبوب خزاںؔ اُردوشعر وادب کی دنیا میں اپنے کئی اشعار کی بدولت معروف ہیں تاہم کم گوئی کی وجہ سے عوام اُنھیں بہت کم جانتے ہیں۔ محبوب خزاںؔ اپنے مزاج کے آدمی اور شاعر تھے۔ تمام عمر ادبی محفلوں سے بھاگتے رہے۔ انور سن رائے کا لکھنا ہے کہ تہران میں بھی تعینات رہے، تو اپنے ڈھنگ سے ملازمت کی۔۔۔ ضروریات محدود رکھیں۔۔۔ محفلوں سے بھاگتے تھے۔ افسردگی اور شاعری۔۔۔دونوں کو چھپاتے تھے۔ ۔۔عمر بھر ازدواج کے جنجال سے دُور رہے۔۔۔ زندگی والدہ کے لیے وقف کیے رکھی۔۔۔ بے تھکان بولتے تھے اور خوب بولتے تھے۔ 1982ء میں ان سطور کے لکھنے والے کا پہلا شعری مجموعہ ’’دیوارِ آب‘‘ چھپا‘‘ بالمشافہ ملاقات نہیں ہوئی تھی۔۔۔ ایک دن کراچی سے ٹیلی فون آیا۔۔۔ بھائی! میَں محبوب خزاں بول رہا ہوں۔۔۔ محمود لودھی نے تمھارا مجموعہ پڑھنے کے لیے دیا تھا۔۔۔ اس کے بعد اُنھوں نے کتاب پر، شاعری کے استعاراتی پہلوئوں پر اور اشعار کے تصویری منظروں پر ایسی خوبصورت گفت گو کی کہ وہ کہیں اور سنا کرے کوئی۔ ۔۔جسارت کر کے کہا کہ حضرت! جو کچھ فرما رہے ہیں،لکھ دیجیے کہ اعزاز ہوگا۔۔۔ ناخوش ہو گئے کہ بھائی! میَں لکھا نہیں کرتا۔۔۔محبوب خزاں کا شمار انتہائی کم گو شاعر اور مطالعے سے بے حد شغف رکھنے والوں میں کیا جاتا ہے۔وہ دوسروں کو بھی کم کہنے، اچھا کہنے اور اپنا کہنے کی ہدایت دیتے رہے۔اُن کا ایک شعر اسی بابت ہے: میَں تمھیں کیسے بتاؤں کیا کہو کم کہو، اچھا کہو، اپنا کہو محبوب خزاں ؔکے بے شمار اشعار اور غزلیں بہت مقبول ہوئیں۔بعض اشعار تو ضرب المثل کا درجہ اختیار کر چکے۔
اکلوتے شعری مجموعے ’’ اکیلی بستیاں‘‘ کے تخلیق کار محبوب خزاںؔ کی زندگی کا چراغ 4دسمبر2013ء کو روشنیوں کے شہر کراچی میں گُل ہو گیا
بشکریہ: سید کاظم جعفری
۔۔۔۔۔۔
منتخب کلام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیکھو، دنیا ہے، دل ہے
اپنی اپنی منزل ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ دلنواز اداسی، بھری بھری پلکیں
ارے، ان آنکھوں میں کیا ہے، سنو، دکھاؤ مجھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک محبت کافی ہے
باقی عمر اضافی ہے
کہتا ہے چپکے سے یہ کون
” جینا وعدہ خلافی ہے”
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دام ہزاروں دل کے لئے
کون چلا منزل کے لئے
دل لے کر اب جائیں کہاں
دنیا چھوڑی دل کے لئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب اس قدر ستم و جور کے لئے بھی نہیں
یہ زندگی جو کسی اور کے لئے بھی نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں تمہیں کیسے بتاؤں، کیا کہو
کم کہو، اپنا کہو، اچھا کہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پلٹ گئیں جو نگاہیں انہیں سے شکوہ تھا
سو آج بھی ہے مگر دیر ہو گئ شائد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ جو ہم کبھی کبھی سوچتے ہیں رات کو
رات کیا سمجھ سکے ان معاملات کو
آنکھ جب اُٹھے بھر آئے، شعر اب کہا نہ جائے
کیسے بھول جائیے ، بھولنے کی بات کو
اے بہارِ سرگراں! تو خزاں نصیب ہے
اور ہم ترس گئے تیرے التفات کو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سکوں پیام اداؤں کو مہرباں دیکھو
سمجھ گئے تو کوئی اور آستاں دیکھو
وہی قیامتِ احساس ہے، جدھر جاؤ
وہی حکایتِ لبریز ہے، جہاں دیکھو
یہ زندگی ہے تمہاری، اگر خرید سکو
نہیں تو خیر، وہی راہِ رفتگاں دیکھو
یہ رنگ جن میں زمانوں کی آگ لرزاں ہے
یہ خوابکارئ جذباتِ رائیگاں دیکھو
یہ نرم خواب سفینے، جزیرہ ہائے تلاش
وہ ہم خرام کناروں کی بستیاں دیکھو
عذابِ دیدہ و دل سے نجات ممکن ہے
تو بھول جاؤ، مگر بھول کر کہاں دیکھو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پلکوں پر حسرت کی گھٹائیں، ہم بھی پاگل تم بھی
جی نہ سکیں اور مرتے جائیں، ہم بھی پاگل تم بھی
خواب میں جیسے جان چھڑا کر بھاگ نہ سکنے والے
بھاگیں اور وہیں رہ جائیں، ہم بھی پاگل تم بھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پھر وہی انتظار کی زنجیر
رات آئی، دئے جلانے لگے
حال، احوال کیا سنائیں تمہیں
سب ارادے گئے، ٹھکانے لگے
منزلِ صبح آ گئی شائد
راستے ہر طرف کو جانے لگے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
محبت کو گلے کا ہار بھی کرتے نہیں بنتا
کچھ ایسی بات ہے، انکار بھی کرتے نہیں بنتا
بھنور سے جی بھی گھبراتا ہے، لیکن کیا کیا جائے
طوافِ موجِ کم رفتار بھی کرتے نہیں بنتا
اسی دل کو بھری دنیا کے جھگڑے جھیلنے ٹھہرے
یہی دل جس کو دنیا دار بھی کرتے بھی نہیں بنتا
جلاتی ہے دلوں کو سردمہری بھی زمانے کی
سوالِ گرمئ بازار بھی کرتے نہیں بنتا
خزاں ان کی توجہ ایسی ناممکن نہیں، لیکن
ذرا سی بات پر اصرار کرتے بھی نہیں بنتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آئینے کہتے ہیں اس خواب کو رسوا نہ کرو
ایسے کھوئے ہوئے انداز سے دیکھا نہ کرو
کیسے آ جاتی ہے کونپل پہ یہ جادو کی لکیر
دن گزر جاتے ہیں، محسوس کرو یا نہ کرو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دنیا کے روگ جھیلئے کمرے میں بیٹھ کر
کھڑکی کے پاس جائیے، حسرت خریدئیے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سنبھالنے سے طبیعت کہاں سنبھلتی ہے
وہ بے کسی ہے کہ دنیا رگوں میں چلتی ہے
تمام آنکھوں میں آنسو ہیں، کیسے ہوتے ہیں
وہ لوگ جن کے لئے زندگی بدلتی ہے
تمہیں خیال نہیں، کس طرح بتائیں تمہیں
کہ سانس چلتی ہے، لیکن اداس چلتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیری ہی طرح اب یہ ترے ہجر کے دن بھی
جاتے نظر آتے ہیں مگر کیوں نہیں جاتے
اب یاد کبھی آئے تو آئینے سے پوچھو
محبوب خزاں شام کو گھر کیوں نہیں جاتے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جنوں سے کھیلتے ہیں، آگہی سے کھیلتے ہیں
یہاں تو اہلِ سخن آدمی سے کھیلتے ہیں
تمام عمر یہ افسردگانِ محفلِ گُل
کلی کو چھیڑتے ہیں، بے کلی سے کھیلتے ہیں
جو کھیل جانتے ہیں اُن کے اور ہیں انداز
بڑے سکون، بڑی سادگی سے کھیلتے ہیں
خزاں کبھی تو لکھو ایک اس طرح کی غزل
کہ جیسے راہ میں بچے خوشی سے کھیلتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حسرتِ آب و گِل دوبارہ نہیں
دیکھ، دنیا نہیں، ہمیشہ نہیں
سادہ کاری، کئ پرت، کئ رنگ
سادگی اک ادائے سادہ نہیں
حالِ دل اتنے پیار سے مت پوچھ
حال آئندہ ہے، گزشتہ نہیں
میں کہیں اور کس طرح جاؤں
تو کسی اور کے علاوہ نہیں
اے ستارو! کسے پکارتے ہو
اس خرابے میں کوئی زندہ نہیں
کبھی ہر سانس میں زمان و مکاں
کبھی برسوں میں ایک لمحہ نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم بہت دور ہو، ہم بھی کوئی نزدیک نہیں
دل کا کیا ٹھیک ہے، کم بخت ٹھہر جائے کہاں
رخِ صحرا ہے خزاں گھر کی طرف مدت سے
ہم جو صحرا کی طرف جائیں تو گھر جائے کہاں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حال ایسا نہیں کہ تم سے کہیں
ایک جھگڑا نہیں کہ تم سے کہیں
زیرِ لب آہ بھی محال ہوئی
درد اتنا نہیں کہ تم سے کہیں
سب سمجھتے ہیں اور سب چُپ ہیں
کوئی کہتا نہیں کہ تم سے کہیں
کس سے پوچھیں کہ وصل میں کیا ہے
ہجر میں کیا نہیں کہ تم سے کہیں
اب خزاں یہ بھی کہہ نہیں سکتے
تم نے پوچھا نہیں کہ تم سے کہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چاہی تھی دل نے تجھ سے وفا کم بہت ہی کم
شائد اسی لئے ہے گلہ کم بہت ہی کم
تھے دوسرے بھی تیری محبت کے آس پاس
دل کو مگر سکون ملا، کم، بہت ہی کم
جلتے سنا چراغ سے دامن ہزار بار
دامن سے کب چراغ جلا، کم بہت ہی کم
یوں مت کہو، خزاں کہ بہت دیر ہو گئ
ہیں آج کل وہ تم سے خفا کم، بہت ہی کم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…