ڈاکٹر وقار خان کی ـ’اِنایا‘

ڈاکٹر وقار خان سے کبھی میری ملاقات نہیں ہوئی نہ میں اُس کے بارے میں جانتا تھا۔تاہم گاہے بگاہے اس کا نام سوشل میڈیا کے توسط سے میری نظر سے گزرتا رہا۔پھر جب ملتان سے تعلق رکھنے والے اس نوجوان کا اولین شعری مجموعہ ــ ـانایا شائع ہوا اور ہر طرف اس کے نام کا چرچہ ہونے لگا تو مجھے بھی اسے پڑھنے کا اشتیاق ہوا۔ ڈاکٹر وقار خان سے میری ایک نسبت تو بہر حال ہے کہ میری طرح وہ بھی میڈیکل ڈاکٹر ہے۔اس ناتے مجھے اس سے رابطہ کرنے میں آسانی ہوئی۔ اور بہت جلدبصدخلوص اس نے اپنا شعری مجموعہ مجھے نظر نواز کر دیا۔میں نے بلا تاخیر ایک ہی نشست میں ساری کتاب پڑھ ڈالی کیونکہ اسے پڑھتے ہوئے میں کسی مقام پر بھی بوریت کا شکار ہو کر کتاب ہاتھ سے چھوڑنے پر مجبور نہیں ہوا ۔15356992_10154854480121177_63118023_nاس کی اہم وجہ یہ ہے کہ اس شعری مجموعے کی ہر نظم اور غزل دوسری سے مختلف ہے اور پھر اس میں تازہ کاری ہے۔ نئے مضامین، نئی زمین اور منفرد لہجہ اس کا خاصہ ہے۔ ایسے عہد میں جہاں شاعری میں بہت زیادہ جعل سازی، نقالی اور خوشہ چینی ہو رہی ہے وہاں ڈاکٹر وقار خان جیسے اوریجنل شاعر جس کی شاعری پر کسی بڑے شاعر یا استاد کی چھاپ نظر نہیں آتی ، کا شعری افق پر نمایاں ہونا اُردو شاعری کے لیے ایک اچھی خبر ہے۔انایا کی بات کریں تو سب سے پہلے اس کا عنوان ہی چونکا دینے والا اور باعثِ طمانیت ہے کہ ایک نوجوان تخلیق کار کے ہاں کس قدر بصیرت ہے اور اس کے سوچنے کا انداز عام نوجوانوں سے کتنا مختلف ہے۔کتاب کا آغازحمدیہ نظم انایا سے ہوتا ہے جو ابتدا ہی میں قاری کے ذہن پر ایک مثبت تاثر چھوڑتی ہے۔
اس کے بعد غزلیں اور آزاد نظمیں ہیں۔ اس مجموعے میں غزلوں کے مقابلے میں نظموں کی تعداد خاصی کم ہے جس سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ ڈاکٹر وقار خان کو غزل کہنا زیادہ مرغوب ہے۔حالانکہ اس کی نظم کا معیار بھی اس کی غزل سے کم نہیں۔بیشتر شعرا کی طرح وقار نے محبت ہی کو زیادہ تراپنی غزل کا موضوع بنایا ہے اور ایک خاص رومانوی فضا اس شعری مجموعے میں آخر تک برقرار رہتی ہے۔
مرے آنسو پونچھ کے سوہنا مرا ماتھا چومتا جائے
میں سینے لگ کے روئوں مرا درد سہے مرا یار
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تُو آزما تو چکا ہے یہ سارے مکر و فریب
بس اب اذانِ محبت زباں پہ لا کر دیکھ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیکھ پگلی نہ دل لگا مرے ساتھ
اتنی اچھی نہیں وفا مرے ساتھ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اک لمحہ وصل کا نہ میسر ہوا اُسے
جس نے ترے خمار میں اک عمر کاٹ دی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمارا پیار تو ہونا تھا شک کی نذر وقار
کہ رہ گیا تھا خلا کوئی اعتماد کے وقت
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اے مری خوش خیال اچھا سوچ
بن ترے کون دل میں آتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے جس کے لیئے خدا چھوڑا
ہائے ! وہ شخص بھی مر ا نہ ہوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں بات بات پہ ہر شخص سے الجھتا ہوں
تمھارے غم نے مجھے چڑچڑا بنا دیا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھ سے دو چار ہی خطائیں ہوئیں
ان میں سے ایک بھول ہے تری یاد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خدا کرے کہ مرے زخم یوں ہی تازہ رہیں
مرے کریم! مرے مہرباں کی خیر رہے

لیکن وقار کی شاعری فقط محبت اور غمِ محبت تک ہی محدود نہیں ۔اس میں مختلف الانواع موضوعات ملتے ہیں۔وہ ایک حسّاس انسان ہے۔دوستوں سے دوستی نبھانے والا اور رشتوں کا احترام کرنے والا۔ اس اعتبار سے بھی وہ اپنے جذبات کا شاعری میں برملا اظہار کرتا ہے۔خدا سے بڑھ کر انسان کا کون دوست ہو سکتا ہے۔اسی لیے وہ کبھی صوفی کی طرح خدا سے بے تکلف ہو جاتا ہے تو کہیں اس سے شکوہ کناں نظر آتا ہے۔
اے خدا! تُو تو جانتا تھا مجھے
تُو نے اچھا نہیں کیا مرے ساتھ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ خدا جو کہ خود ہے لامحدود
مجھ پہ پابندیاں لگاتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اے خدا!تجھ کو ہم رہیں گے یاد
تُو بھی تو ہم کو یاد آئے گا
وقار اپنی ذات کا سب سے بڑا ناقد خود ہے۔ اسی لیے وہ جگہ جگہ اپنا محاسبہ کرتا دکھائی دیتا ہے ،کبھی خدا کے حضور نادم ہوتا ہے تو کبھی زندگی سے معذرت خواہ نظر آتا ہے۔یہ رویہ نہ صرف شاعری بلکہ عملی زندگی میں بھی اپنی اور معاشرے کی فلاح اور بہتری کے لیے نہایت صحت مندانہ ہے۔
میرے دل میں وقار آج بھی بت پڑے
او ر لب پر مرے بندگی، بندگی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں بسر کر نہ پایا تجھے زندگی
معذرت زندگی،زندگی معذرت
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری حالت کہیں درمیاں میں رہی
بے خودی معذرت، آگہی معذرت
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مرا آگے بڑھنے کا شوق بھی،مرا حوصلہ بھی فریب تھا
مجھے منزلوں کا گمان کیا،مرا راستہ بھی فریب تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں غم فروش ہوں تُو میرا اعتبار نہ کر
یہ شعر ڈھونگ ہیں،سینہ فگار دھوکہ ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مرا شعور ہوس،مرا لاشعور ہوس
وصالِ یار ہوس، وصل کا سرور ہوس
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ اور بات کہ ہو روح گھومتی پھرتی
وگرنہ جسم جہاں،واں پہ تو ضرور ہوس
مندرجہ بالا اشعار سے یہ بھی اندازہ ہوتا ہے کہ وقار کو روحانیت کا ادراک ہے۔یہی وجہ ہے کہ اس کی شاعری میں دیگر نوجوان شعرا کے برعکس سطحی مضامین بہت کم ملتے ہیں اور اس کی فکر میں گہرائی ہے۔وہ زندگی کو بہ یک وقت مختلف زاویوں سے دیکھتا ہے۔تبھی تو وہ ایسے اشعار کہہ سکا۔ملاحظہ کیجیے۔
مجھے تو اپنے ہی لہجے سے خوف آتا ہے
کہ جتنا سچا ہوںمیں زہر سے نہ بھر جائوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں دل کا اچھا ہوں لیکن ذرا سا ہوں گستاخ
تُو ایک بار مجھے سینے سے لگا کر دیکھ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اے سخن فہم!مرے شعر سے کیا لگتا ہے
کیا مرے بعد مجھے یاد رکھا جائے گا؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چوٹ دشمن پہ بھی پڑتی ہے تو رو پڑتے ہیں
خاک لڑ پائیں گے احساس کے مارے ہوئے لوگ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یار جو مجھ پہ جان وارتے تھے
کیا کوئی واقعی مرا مرے ساتھ؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ انتہائے شوقِ وفا ہے کہ اب مجھے
ہجر و فراق کھیل ہیں ،سب امتحان خاک
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ روشنی کہ جو نوعِ بشر کو ملتی ہے
کوئی چراغ جلاتا ہے روز کربل میں
میرے لیے اس شعری مجموعے میں سب سے زیادہ حیران کن بات ایک نوجوان شاعر کا عربی الفاط اور تراکیب کا سہولت کے ساتھ استعمال ہے جس سے اس کی ریاضت اور فنی مہارت جھلکتی ہے۔
کوئی تو عشق کے رستے میں بغض رکھتا ہے
کسی کے گھر کا ہے سامان فی سبیل العشق
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صدقہئِ آلِ عبا فزت برب الکعبہ
میں جہاں جا کے لڑا فزت برب الکعبہ
اس مجموعے میں شامل نظمیں بھی اچھے معیار کی ہیں خاص کر ـــــانایا اور وہ عورت تھی دیر پا تاثر قائم رکھنے والی نظمیں ہیں۔المختصر ڈاکٹر وقار خان کا یہ شعری مجموعہ ایک معیاری کتاب ہے۔جس کی اشاعت اور کامیابی پر وہ مبارکباد کا مستحق ہے۔اگر کہیں دو چار جگہوں پر فنی عیوب یا نقائص موجود ہوں تو ان سے صرفِ نظر کیا جا سکتا ہے کیونکہ مجموعی طور پر یہ شعری مجموعہ بہت اچھا تاثر قائم کرنے میں کامیاب رہا ہے اور عام و خاص میں اس کی پزیرئی حیران کن نہیں۔ توقع کی جا سکتی ہے کہ ڈاکٹر وقارخان اگر اسی جذبے، لگن اور انکساری کے ساتھ شعر کہتا رہا تو آنے والے دنوں میں اس کا شمار اہم شعرا میں ہوگا۔میں اس کے لیے دعا گو ہوں۔

ڈاکٹر کاشف رفیق

حفرالباطن،سعودی عرب

جواب چھوڑیں