نثری اور شعری تصانیف کی خوبصورت شاعرہ فرخندہ رضوی کا انٹرویو

نثری اور شعری تصانیف کی خوبصورت شاعرہ فرخندہ رضوی خندہؔ کا انٹرویو

تفکر – آپ کا پورا نام؟
خندہ ؔ۔۔شادی سے پہلے فرخندہ بٹ ،شادی کے بعد  فرخندہ رضوی
تفکر – قلمی نام؟
خندہ ؔ۔۔ خندہ
تفکر – کہاں اور کب پیدا ہوئے؟
خندہ ؔ۔۔ چار مارچ  1960   ڈاکٹر علامہ اقبال کے شہر سیالکوٹ و محلہ کشمیری میں پیدا ہوئی۔
تفکر – تعلیمی قابلیت؟
خندہ ؔ۔۔ بی اے نامکمل  ۔۔۔۔۔
تفکر – ابتدائی تعلیم کہاں سے حاصل کی؟
خندہ ؔ۔۔ ابتدائی اور کالج تک  شہر سیالکوٹ
تفکر – اعلی تعلیم کہاں سے حاصل کی؟
خندہ ؔ۔اعلیٰ تعلیم تک پہنچنے کی نوبت ہی نہیں آئی تھی کہ شادی ہو گئی ۔

تفکر – پیشہ؟

خندہ ؔ۔۔ شادی سے پہلے دروتدریس سے وابستگی رہی ۔۔ چھٹی تک کی کلاسز تک سکول کی بنیاد رکھی اپنی کزن کے ساتھ مل کر جو آج بھی سیالکوٹ شہر میں خواجہ سلیم میمیوریل کے نام ہے قائم ہے ۔۔اَب ہاؤس وائف

تفکر –ادبی سفر کا اآغاز کب ہوا؟

    خندہ ؔ۔۔سکول کے زمانے سے ہی لکھنے کا شوق ہوا ۔۱۹۸۰ بقاعدہ مختلف میگزین میں لکھنے کا آغاز کیا ۔
تفکر – آپ نظم یا غزل میں کس سے متاثر ہوئے؟
خندہ ؔ۔۔     زمانہ طالبعلمی میں (فراز احمد فراز ) پروین شاکر صاحبہ  ، فرحت عباس شاہ کو بہت پڑھا  ساغر صدیقی بہت پسند ہیں
تفکر – ادب کی کون سی صنف زیادہ پسند ہے؟
خندہ ؔ۔۔تعلیمی دور میں تو کسی شاعر یا ادیب کی اُستادی تو نصیب نہیں ہوئی ،۱۹۸۳ میں شادی کے بعد دیار غیر میں آ بسی تو یہاں بہت ہی پیارے و قابل  شاعر ومصنف ،دستِ شناس جناب محترم خالد یوسف صاحب کی شاگردی میں خود کو سنوارنے کا موقع میسر آیا ۔پہلے تو
علم و عروض کا فن سیکھنے کا عمل خود ہی شروع کیا بہت سی کتابوں سے استفادہ حاصل کیا ۔سب سے زیادہ ڈاکٹر تقی عابدی کی علم و عروض نے متاثر کیا ۔۔میرے خیال سے علم و عروض شاعری کی پہلی سیڑھی ضرور ہے مگر اندازہ ہوا کہ شعر تو کہیں اندر پَلتا ہے
دس سال کے ساتھ کے بعد میرے استاد ِ محترم خالد یوسف صاحب کا انتقال ہو گیا۔میری خوش قسمتی یہ رہی کہ میرے اشعار اس سے پہلے کے یتیمی کا لبادہ اُوڑھتے مجھے بہت مشفق استاد کی صورت میں محترم صفدر علی ہمدانی صاحب کا ساتھ نصیب ہوا ۔۔۔۔
تفکر – ادب کی کس صنف میں زیادہ کام کیا؟

خندہ ؔ۔۔ میں نے نثر اور شاعری دونوں پر کام کیا ہے ،  نثر میں افسانے ،کہانی ،کالم نگاری ،کتابوں پر تبصرہ ،مزاح پر تحریریں لکھی ہیں ۔جو  یوکے ،پاکستان اور انڈیا کے بہت سے اخبار و میگزین میں شائع ہوتی رہی ہیں اور ہو رہی ہیں ۔۔

تفکر – اب تک کتنی تصانیف شائع ہو چکی ہیں؟

خندہ ؔ۔۔  شاعری کی نسبت نثر میں بہت کام کیا ہے ۔

تفکر – اپنے خاندان کے حوالے سے کچھ بتائیں؟
خندہ ؔ۔۔ پہلا شعری مجموعہ جنوری ۲۰۰۰  میں ( سنو خموشی کی داستاں ) کے نام سے آزاد نظموں پر مشتمل  شائع ہوا
دوسرا  شعری مجموعہ فروری  ۲۰۰۶ میں ( فاصلے ستا رہے ہیں )کے نام سے آزاد نظموں اور نثری نظموں پر مشتمل  ہے
تیسرا شعری مجموعہ    ۲۰۱۲  میں   (   زیر  ِ لَب خندہ  )  غزلوں ،و  نظموں  کا مجموعہ  پبلیش ہوا

 تفکر -نثری تصانیف کی تعداد اور نام   ؟

خندہ ؔ۔۔جنوری 2010  میں افسانوں  اور سچی کہانیوں کا مجموعہ  (پھر وہ صُبح کہاں )  شائع ہوا۔ 2012  میں ایک کتاب جو  تین حصوں پر مشتمل  تنقیدی مضامین ،تبصرے ،مضامین ، پذیرائی ، سفرنامچہ
(قلم خندہ )  کے نام سے شائع ہو چکی ہے

تفکر – ازدواجی حیثیت؟

خندہ ؔ۔۔زندگی کا لمبا سفر طے کر لیا ۔۔۔الحمدوللہ شادی کو ۳۳ سال کا عرصہ گزر گیا ،خوشگوار و پر سکون زندگی اپنے شریک حیات کے ساتھ گُزر رہی ہے ۔

تفکر -اپنے خاندان کے حوالے سے کچھ بتائیں  ؟
خندہ ؔ۔۔میرا کسی ادب گھرانے سے کوئی تعلق نہیں رہا ،دور دور تک کوئی ادب نواز نہیں رہا ۔اگر تو میرا بھی کسی ادبی گھرانے سے تعلق ہوتا تو شاہد مجھے بھی  اپنی پہچان کے لیے اتنی محنت نا کرنی پڑتی ۔میں واحد ہستی جسے قلم سے محبت رہی ۔
بٹ اور اوپر سے کاروباری خاندان یعنی والد صاحب کا  لیدر کا بزنس رہا ، اٹیچی کیس ، سفری بیگ ،اور  دستانے کارخانے میں
ہی تیار ہوتے دیکھے ۔سب پڑھے لکھے ہیں مگر ادب کی دنیا کوسو دور تھی میرے خاندان سے ۔۔ تین بہنیں دو بھائی ،میں پہلی شخصیت تھی لڑکیوں میں جس نے کالج کی طرف سفر شروع کیا ۔
والدین کا انتقال ہو چکا ہے ایک بہن جس کا انتقال ہوئے بارہ سال ہونے کو ہیں ۔۔۔ہم دو بہنیں اور دو بھائی برطانیہ میں مقیم ہیں

تفکر – فیملی ممبرز کے بارے میں بتائیے؟
خندہ ؔ۔۔    ایک بیٹی  ایک بیٹا  دونوں ہی نے اعلیٰ تعلیم حاصل کی ہے ۔بیٹی کی  چار سال پہلے شادی کی اَب ایک پیارے پیارے خوبصورت سے نواسے کی نانی اماں بن چکی ہوں ۔ بیٹے نے ایک سال پہلے اپنی تعلیم مکمل کی اَب جاب کرتا ہے۔
تفکر – آج کل کہاں رہائش پذیر ہیں؟
خندہ ؔ۔۔پچھلے  چونتیس 34 سال سے برطانیہ کے شہر ریڈنگ میں مقیم ہوں۔
تفکر – بچپن کی کوئی خوبصورت یاد؟
خندہ ؔ۔۔  میرا تو ہر لمحہ ہی خوبصورت یادوں سے بھرا پڑا ہے ،بہت شرارتی تھی جو اَب بھی ہوں ۔ کوئی کھیل ایسا نہیں جو نہیں کھیلا چاہیے وہ لڑکوں کا کھیل ہو یا لڑکیوں والا ۔۔دیواروں اور درختوں پر چڑھنا مشغلہ تھا ۔۔قلم سے تو محبت ہے ہی اپنے گھر کا ہر کام پیپر ،پینٹ ، ڈی آئی وائی سب کام کر لیتی ہوں ۔۔ہر کسی سے دوستی ہے نفرت کو کبھی اندر پلنے نہیں دیتی آج تک کسی سے نفرت نہیں کی ۔پوری زندگی واقعات سے بھری ایک کتاب کی مانندہے ۔
تفکر – ادبی سفر کے دوران میں کوئی خوبصورت واقعہ؟
خندہ ؔ۔۔پورا  ادبی سفر ہی واقع ہے کیونکہ پوری فیملی میں ہی کوئی ادب نواز نہیں سوائے میرے ،میں فرد ِواحد ہوں جو قلم کی حُرمت کی پاسداری کا بھرم رکھے ہوئے ہوں ۔خوش قسمتی یہ رہی کہ فیملی کا کوئی فرد بھی لکھنے میں روکاوٹ نہیں بنا ہر کسی نے حوصلہ افزائی کی۔ والدین بہن بھائیوں کے ساتھ ساتھ شریک حیات اور بچوں نے قدم قدم پر میرا ساتھ دیا ۔لکھنے کے بعد کتاب کی اشاعت پھر رسمِ اجرأ تک کی ذمہ داری میں بھرپور ساتھ دیا ۔۔

تفکر – ادب میں کن سے متاثر ہیں؟

خندہ ؔ۔۔ ہر مصنف کو بہت دلچسپی سے پڑھا ہے اور پڑھتی ہوں  کتاب بینی میرا مشغلہ ہے ۔انتظار حسین ،عصمت چغتائی ،سعادت حسین منٹو، اشفاق احمد ،قدرت اللہ شہاب ،  سب سے زیادہ منٹو اور اشفاق احمد رہے ہیں ۔مزاح مجھے مستنصر حسین تارڑ کا پسند ہے۔

تفکر – ادبی رسائل سے وابستگی؟

خندہ ؔ۔۔آپ کو معلوم ہی ہے آپ اخبارات کی مالی مدد کرتے رہیں تو مشاورت ،وابستگی میں نام خود بخود شامل ہو جاتا ہے کوئی مشکل کام نہیں۔ ذاتی وابستگی تو نہیں رہی مگر اخبارات ،میگزین میں لکھنے کا سلسلہ تو بہت پرانا ہے 1980 سے اب تک پاکستان ،یوکے ،اور انڈیا کے بہت سے اخبارات و میگزین میں کالم ،مضامین اور کلام شائع ہوتا رہتا ہے۔
صفدر علی ہمدانی صاحب کے پیپر  عالمی اخبار آن لائن کی بیوروچیف ہوں۔
تفکر – ادبی گروپ بندیوں اور مخالفت کا سامنا ہوا؟
خندہ ؔ۔۔نہیں ایسا کوئی تجربہ تو نہیں ہوا ،ادبی گروپ بندی تو ہر جگہ موجود ہے ۔میں تو بہت سے کالم بھی لکھ چکی ہوں اِسی بات کو لے کر اللہ کا لاکھ لاکھ شُکر ہے کہ میں کسی ایسی گروپ کا حصہ نہیں ہوں ۔میں  بہت کم مشاعروں میں حصہ لیتی ہوں ۔بس چاہتی ہوں۔ اردو اَدب پر کام ہوتا رہناچاہیے ۔ڈگریوں کی نمائش یا خود کو عالم سمجھنا چھوڑ دیں تو ہر لکھاری ہی اچھا ہو گا ۔ڈگریوں سے نا کوئی شاعر اور نا کوئی بڑا مصنف بنا ہے ،آپکے مشاہدے و تجربات قلم میں طاقت بھرتے ہیں ۔جتنا نفیس انسان ہو گا اتنا اچھا قلمکار بنے گا۔
میرے خیال میں ایک لکھاری کو دوسرے لکھاری کا احترام کرنا چاہیے ۔نقطہ چینی نقصان دہ عمل ہے ۔تبادلہ خیال تو کیا جا سکتا ہے ایسے میں ایک دوسرے  کی تحریر کو تقویت ملتی ہے ۔ ایسی میری رائے ہے ہر کسی کا متفق ہونا لازم نہیں، ہر کسی کو اپنی رائے کا اختیار ہے)۔
تفکر – ادب کے حوالے سے حکومتی پالیسی سے مطمئن ہیں؟
خندہ ؔ۔۔اِس  سوال کا جواب زرا مشکل ہے میرے لیئے ، سمجھداری کی سیڑھی پر ابھی قدم رکھا ہی تھا کہ اپنے وطن کو خیر باد کہنا پڑا۔ ادب کے سلسلے میں کیا کیاکام ہو رہا ہے بلکل لاتعلق ہوں ۔ہاں جہاں مقیم ہوں برطانیہ میں یہاں اردو اَدب پر بہت کام ہو رہا ہے ۔ہر قلم کار اردو کو زندہ رکھنے کی کوشش میں سرگرداں ہے ۔مشاعرے ،و ادبی محفلیں سجائی جاتی ہیں وطن سے آنے والے ادیبوں کو سَر آنکھوں پر بیٹھایا جاتا ہے ۔(یہ سوال تب تک اُٹھائے رکھتی ہوں جب تک پاکستان آکر نہ دیکھوں)
تفکر – اردو ادب سے وابستہ لوگوں کے لئیے کوئی پیغام؟
خندہ ؔ۔۔ بس یہی کہوں گی اُردو کی خدمت اسی طرح ممکن ہو سکتی ہے کہ ہر لکھنے والے کا خیر مقدم کیا جائے نئے لکھنے والوں کو اپنے ساتھ بیٹھنے کی جگہ اور پلیٹ فارم مہیا کیا جائے،حوصلہ افزائی کریں اسی طرح نئے لکھنے والوں کے راستے ہموار ہو سکتے ہیں ۔ہر پرانا لکھنے والا بھی کبھی نیا ہوتا ہے  اسے دھیان میں رکھا جائے۔
تفکر – ہماری اس کاوش پر کچھ کہنا چاہیں گے؟
خندہ ؔ۔۔فکر کے اِس پلیٹ فارم سے مجھ جیسے کئی اور گمنام بھی اُجاگر ہوں گے ۔بہت اچھی کاوش ہے ۔ہر لکھاری کی خواہش ہوتی ہے کہ اُس کی بھی پہچان ہو ۔اچھے اور بُرے لکھنے کا فیصلہ قاری پر چھوڑدینا چاہیے۔ تفکر کی تمام ٹیم کو مبارک  اِس درخواست کے ساتھ کہ یہ سلسلہ جاری رہنا چاہیے۔
تفکر – شعر یا تحریر؟

خندہ ؔ۔۔ یوں تو کئی افسانے اورغزلیں ہیں مگر ایک غزل سے اپنے دو اشعار تحریر کرتی چلوں گی۔بہت سے شکریے کے ساتھ

دامنِ ضبط کو اشکوں سے بھگویا جائے
آج پھر ٹوٹ کے، دِل کھول کے رویا جائے
غرق کرتا ہی رہے گا یہ کنارے کَب تک
آبِ سمندر کو سمندر میں ڈبویا جائے

S N 15

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…