منفرد اسلوب کی باکمال شاعرہ اور ادیبہ شہناز مزمل کا انٹرویو

منفرد اسلوب کی باکمال شاعرہ اور ادیبہ شہناز مزمل کا انٹرویو

تفکر – آپ کا پورا نام؟

شہناز مزمل۔۔شہناز مزمل

تفکر – قلمی نام؟

شہناز مزمل۔۔شہناز مزمل

تفکر – کہاں اور کب پیدا ہوئے؟

شہناز مزمل۔۔10 اپریل 1954 کو فیصل آباد میں پیدا ہوئیں۔

تفکر -تعلیمی قابلیت؟

شہناز مزمل۔۔ایم اے انفارمیشن مینجمنٹ 1982
سائینٹفک مینجمنٹ 1992 ہالینڈ
پبلک سروس کمیشن 1983 میں حاصل کیا
لائبریری ڈائریکٹر 1984 میں بنی۔

تفکر – ابتدائی تعلیم کہاں سے حاصل کی؟

شہناز مزمل۔۔میٹرک کوہ نور گرلز ہائی اسکول فیصل آباد سے کیا

تفکر – اعلی تعلیم کہاں سے حاصل کی؟

شہناز مزمل۔۔نیدر لینڑز سے

تفکر -پیشہ؟

شہناز مزمل۔۔چئیرپرسن ادب سرائے

 

تفکر –ادبی سفر کا اآغاز کب ہوا؟

شہناز مزمل۔۔کلاس چہارم سے شاعری کا آغاز کیا۔

تفکر – آپ نظم یا غزل میں کس سے متاثر ہوئے؟

شہناز مزمل۔۔الب اقبال کے بعد ن م راشد ادا جعفری

تفکر -کسی شاعر یا ادیب کا تلمذ اختیار کیا؟

شہناز مزمل۔والسلام صاحب خودشا عر تھے
تفکر – ادب کی کون سی صنف زیادہ پسند ہے؟

شہناز مزمل۔۔نظم ،غزل

تفکر – اب تک کتنی تصانیف شائع ہو چکی ہیں؟

شہناز مزمل۔۔ 1987 میں ایک ادبی تنظیم ،، ادب سرائے ،، کی بنیاد رکھی جس کے تحت تیس سال سے ادبی تقریبات اور شہناز مزمل ادبی ایوارڈ کا انعقاد بھی کیا جاتا ہے۔
ادبی اثاثے میں اڑھائی درجن کے لگ بھگ کتب ہیں
جن میں سے چند ایک کے نام درج ذیل ہیں ۔۔۔۔
۱: ابتدائے عشق
۲: عشق سمندر
۳:عشق مسلسل
۴: عشق مسافت
۵: انتہائے عشق
۶: جادۂ عرفاں
۷: میرے خواب ادھورے ہیں۔۔

 

تفکر – ازدواجی حیثیت؟

شہناز مزمل۔۔بیوہ

تفکر – فیملی ممبرز کے بارے میں بتائیے؟

شہناز مزمل۔۔دوبیٹیاں

تفکر – آج کل کہاں رہائش پذیر ہیں؟

شہناز مزمل۔۔سعودی عرب لاہور اسلام اباد

تفکر – بچپن کی کوئی خوبصورت یاد؟

شہناز مزمل۔۔بچپن سارا ہی خوبصورت

تفکر – ادبی سفر کے دوران میں کوئی خوبصورت واقعہ؟

شہناز مزمل۔۔جب قرآن پاک کا منظوم مفہوم مکمل ہوا ر مجھ پر کئی ےحقیقی مقالہ جات لکھےگیے

تفکر – ادب میں کن سے متاثر ہیں؟

شہناز مزمل۔۔ن م راشد ،ادا جعفری

تفکر – ادبی رسائل سے وابستگی؟

شہناز مزمل۔۔ جی 1996 تک 100 کالم لکھے یونیورسٹی میگزین امخزن قائداعظم لائبریری ادب سرائے میگڑئن

تفکر – ادبی گروپ بندیوں اور مخالفت کا سامنا ہوا؟

شہناز مزمل۔۔جی

تفکر – ادب کے حوالے سے حکومتی پالیسی سے مطمئن ہیں؟

شہناز مزمل۔۔نہیں

تفکر – اردو ادب سے وابستہ لوگوں کے لئیے کوئی پیغام؟

شہناز مزمل۔۔خوب پڑھیں خوب لکھیں بےلوث ہوکر

تفکر – ہماری اس کاوش پر کچھ کہنا چاہیں گے؟

شہناز مزمل۔۔بہترین کاوش

تفکر – شعر یا تحریر؟

شہناز مزمل۔۔

 شہناز مزمل۔۔فن و شخصیت پر کئی مقالہ جات بھی تحریر ہو چکے ہیں۔ کئی ایواڈ سے بھی نوازا جا چکا ھے اور مجھے ایک سعادت یہ بھی حاصل ہے کہ میں نے مکمل قرآنِ پاک کا منظوم ترجمہ کیا ہے
منفرد اسلوب کی باکمال شاعرہ اور ادیبہ ہیں آئیے ان کے کلام میں سے کچھ اشعار دیکھتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جب بھی دعا کے واسطے میں نے اٹھائے ہاتھ
چپ چاپ سر جھکا کے کہی رب سے ایک بات

یا تو مری دعاوں کو کر لینا تو قبول
یا مجھ کو باندھ لینا تو اپنی رضا کے ساتھ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہاں پہ کون کسی کو خرا ج دیتا ہے
بس اک خدا ہی فقیری میں راج دیتا ہے

تم اپنے شانوں پہ سر تو لگا و نادانو
بغیر سر کے کبھی کوئی تاج دیتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بس تجھے سوچنا اورتجھ سے محبت کرنا
ہر گھڑی دید کی اور قرب کی چاہت کرنا

عشق نے روح کو اسطرح ہے سرشار کیا
سیکھا عاشق نے کہاں ہے کبھی نفرت کرنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

طلوعِ صبح ہے امید کا اجالا ہے
لہو سے سینچ کر دھرتی کو اپنی پالاہے

کوئی بھی آنچ نہ آئے گی تحفۂ رب پر
مرے وطن کا زمانے میں بول بالاہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اپنی تلاش مجھ کو کہاں لے کر آگئی
عاشق کو عاشقی نیا رستہ دکھا گئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ جلتی دھوپ میں اک سائبان جیسی تھی
زمیں پہ رہ کے بھی وہ آسمان جیسی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تلاش رب کی ہے تو آو ایک کام کریں
مٹا کے نفرتیں چاھت کا اہتمام کریں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تیر خالق کمان میں رکھنا
سب کو اپنی امان میں رکھنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کبھی سزا نہ ملی اور کبھی جزا نہ ملی
میں انتہا پہ پہنچی تو ابتدا نہ ملی

سوال کرتی رہیں روز شبنمی آنکھیں
چمک تو روز ملی کیوں کبھی بقاء نہ ملی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

زندگی کا حساب کرتے ہو
کیوں ہمیں لاجواب کرتے ہو

کچھ نیہں پاس اک دعا کے سوا
اور تم احتساب کرتے ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

گم تھے ہم اپنی ذات کے اندر
اس نے خود ہی بنا لیا عاشق

عشق کی مے پلا کے ساقی نے
خود ہی خود میں چھپا لیا عاشق
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بنا کے گردشِ دوراں جو انتہا کی تھی
میرے خدا نے محبت کی ابتدا کی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دعا دستک ہے رب کے در پہ سب کی
عطا جود و سخا ملتی ہے رب کی

رضا پہ اسکی گر راضی ہوئے تم
توپاوگے ہر اک شے جو طلب کی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حجرۂ دل میں اتر کر کبھی جھانکا میں نے
اس میں تو تیری محبت کے سوا کچھ بھی نہیں

ہر طرف تو ہے ترا نور ترا جلوہ ہے
کعبۂ دل تری چاہت کے سوا کچھ بھی نہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پردہ ظلمت سے ہٹاتے ہیں سحر دیکھتے ہیں
چشم پر نم نے کیا کتنا اثر دیکھتے ہیں
درد ہے عشق کی معراج تو ڈرنا کیسا
آبلے پھوڑ کے رفتار ۔سفر دیکھتے ہیں
کھٹکھٹانا نہیں بوسیدہ کواڑوں کو کبھی
ایک دستک سے ہی گرتا ہوا گھر دیکھتے ہیں

S N 22

جواب چھوڑیں