"کھیر کی پلیٹ” ناول کی رائٹر عالیہ بخاری ہالہ کا انٹرویو

"کھیر کی پلیٹ” ناول کی رائٹر عالیہ بخاری ہالہ کا انٹرویو

تفکر – آپ کا پورا نام؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔سیدہ عالیہ بخاری

تفکر – قلمی نام؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔عالیہ بخاری ہالہ

تفکر – کہاں اور کب پیدا ہوئے؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔20 مارچ فیصل آباد

تفکر – تعلیمی قابلیت؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔ایم اے اردو

تفکر – ابتدائی تعلیم کہاں سے حاصل کی؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔لاہور سے

تفکر – اعلی تعلیم کہاں سے حاصل کی؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔سمندری ڈگری کالج فیصل آباد سے پنجاب یونیورسٹی لاہور سے

تفکر – پیشہ؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔میں ایک رسالے کی مدیرہ ہوں لیکن یہ میرا شوق ہے پیشہ نہیں بنیادی طور پر میں ہاوس وائف ہوں

تفکر –ادبی سفر کاآغاز کب ہوا؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔اسکول کے زمانے میں بچوں کے لئے کہانیاں اورنظمیں لکھ کر

تفکر – آپ نظم یا غزل میں کس سے متاثر ہوئے؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔اساتذہ کے علاوہ بھی اچھی غزل یا نظم بلکہ بعض اوقات اچھا خیال بھی متاثر کر جاتا ہے

تفکر -کسی شاعر کا تلمذ اختیار کیا؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔جی نہیں

تفکر – ادب کی کون سی صنف زیادہ پسند ہے؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔شاعری اور افسانہ دونوں ہی بہت پسند ہیں

تفکر – ادب کی کس صنف میں زیادہ کام کیا؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔ تنقید اور کالم بھی بہت لکھے مگر افسانہ زیادہ لکھا ہے

تفکر – اب تک کتنی تصانیف شائع ہو چکی ہیں؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔میرے اردو اور پنجابی کے شعری مجموعے زیر طبع ہیں نام زیر غور ہیں

تفکر -نثری تصانیف کی تعداد اور نام؟    

عالیہ بخاری ہالہ۔۔گورکھ دھندہ،افسانوی مجموعہ خواب حسن حقیقی مولوی قدرت اللہ پاکستانی (کہانیاں)،کھیر کی پلیٹ ( ناول)

تفکر – اپنے خاندان کے حوالے سے کچھ بتائیں؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔میرا تعلق سادات کے اس صوفی خاندان سے ہے جنہوں نے تبلیغ دین کے لئے بر صغیر کا رخ کیاہمارے اجداد میں حضرت سید جلال الدین سرخ بخاری نےاچ شریف میں آکر ڈیرے ڈالے،ان کا نام صوفیآ اور اولیاء کی اس کہکشاں میں جنہوں نے ہندوستان میں اسلام کی ترویج کے لئےکار ہائے نمایاں انجام دئیے آج بھی جگمگاتا ہوا نظر آتا ہے اس کے بعد نسل در نسل ستاروں کا ایک سلسلہ ہے سید جلال الدین سرخ بخاری کے پوتے سید جلال الدین جہاں گشت بخاری کی بھی اسلام کے لئے گراں قدر خدمات ہیں آپ کے ہاتھ پر بیشمار لوگ مسلمان ہوئے میرے پردادا سید حیدر علی شاہ کا مزار نوشہرہ میں مرجع خلائق ہے ان کی درگاہ پر مسلمان ہی نہیں ہندو سکھ بھی آکر فیض پاتے ہیں۔میرے دادا سید نوازش علی شاہ گڑھی شاھو لاہور میں آسودہ ہیں۔ان کا آستانہ بھی خاص و عام کے لئے باعث برکت ہے دادا جی ایک علمی و ادبی شخصیت تھے۔علامہ اقبال رح ان کے دوستوں میں شامل تھے۔میرے والد کو ایسی کئی مجالس یاد ہیں جن میں وہ بھی موجود تھے گو بہت چھوٹے تھےدادا جی ایک علمی و ادبی شخصیت تھے۔مگر ان کا انہماک اور میلان طبع مذہب کی طرف تھی۔انہوں نے عارف نامہ اور نصیحت نامہ جیسا گراں قدر صوفیانہ کلام لکھا ان کا فارسی کلام ابھی شائع نہیں ہو سکا مگر محفوظ ہے۔علم و فیض کا سرچشمہ اور لنگر خانہ جو میرے خاندان کا طرہ امتیاز ہے میرے والد کے ڈیرے پر ابھی بھی جاری و ساری ہے

تفکر – ازدواجی حیثیت؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔شادی شدہ

تفکر – فیملی ممبرز کے بارے میں بتائیے؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔میرے چار بچے ہیں۔ما شااللہ دو بیٹےاوردو بیٹیاں بچے زیر تعلیم ہیں

تفکر – آج کل کہاں رہائش پذیر ہیں؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔گڑھی شاہو لاہور میں

تفکر – بچپن کی کوئی خوبصورت یاد؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔بہت سی یادیں ہیں جن پر ہونٹ مسکا جاتے ہیں اور آنکھیں بھیگ جاتی ہیں بہن,بھائی,ہسنا,کھیلنا لڑنا جھگڑنا سکول سہیلیاں اسکول میں  ایک بار مضمون نویسی کا مقابلہ ہوا میں نے بھی مضمون لکھا مگر ٹیچر نے کہا کہ یہ مضمون آپ اپنی امی سے لکھوا کے لائی ہو یہ پہلے سے ہی کاپی میں موجود تھا یہ نہ تو رائٹنگ کلاس ٹو کی بچی کی ہے اور نہ اس عمر کا بچہ اتنا پختہ مضمون لکھ سکتا ہے تو جناب میرے لاکھ دہائی ڈالنے کے باوجود مجھے فرسٹ پرائز نہیں ملا گھر آ کر میں نے امی کو روتے ہوئے بتایا کہ آج میرے ساتھ یہ ہوا ہے تو انہوں نے مجھے گلے لگا کر کہا یہ بھی میری بیٹی کی قابلیت کا اعتراف ہی ہے کہ استانی سوچ ہی نہیں سکی کہ یہ مضو ن اسی بچی نے لکھا ہے

تفکر – ادبی سفر کے دوران میں کوئی خوبصورت واقعہ؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔ایک بار میں اور میرا بیٹا معروف و مشہور  تنقید نگار محترم انور سدید مرحوم سے ملنے گئے علی کو انہوں نے پہلی بار دیکھا تھا پوچھنے لگے یہ بخاری صاحب ہیں میں نے ابھی نہیں ہی کہا بولے اچھا اچھا ۔۔۔ تنویر نوازش ہیں،میں نے بتایا کہ یہ میرا بیٹا ہے انہوں نے غور سے ہمارا جائزہ لیا اور بولے بھائی بتایا کیجیے نظر لگ جاتی ہےپھر افسانے وغیرہ پر بات ہونے لگی  کہنے لگے میں نے آپ کا افسانہ منزل پڑھا ہے بے حد جاندار تحریر ہے آ ج کی نسل نہیں جانتی کہ پاکستان کتنی تکلیفوں کے بعد حاصل ہوا ان کے لئے تو یہ پکی پکائی کھیر ہے آپ نے تو یہ سب دیکھا ہو گا اس لئے پڑھنے والے کو بھی محسوس ہوتا ہے جیسے وہ یہ سب دیکھ رہا ہوابھی کچھ دیر پہلے وہ مجھے علی سے چھوٹا سمجھ رہے تھے اور ا ب انہوں نے میری عمر پاکستان سے بھی بڑی کر دی تھی مگر ایک نقاد کے یہ الفاظ میرے لئے ایک اعزاز تھے کہ انہیں میرا لکھا آنکھوں دیکھا محسوس ہوا

تفکر – ادب میں کن سے متاثر ہیں؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔اشفاق احمد،ممتاز مفتی،قدرت اللہ شہاب اور بہت سے

تفکر – ادبی رسائل سے وابستگی؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔میں نےلہراں تخلیق تجدیدنو غنیمت جمالستان میں بہت لکھا جنگ میگزین اور ادبی ایڈیشن میں بھی گاہے بگاہےچھپتی رہی نوائے وقت میں بھی لکھا  اس کے علاوہ بھی اخبارات و جرائد میں بہت لکھا ہےاب میں اپنا ادبی مجلہ ماہنامہ نوازش لاہورمرتب اور پبلش کرتی ہوں

تفکر – ادبی گروپ بندیوں اور مخالفت کا سامنا ہوا؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔جی نہیں میرے ساتھ ایسا نہیں ہوا شاید اس کی وجہ یہ ہو کے میں نے زیادہ تر کام پس منظر میں رہ کر کیا

تفکر – ادب کے حوالے سے حکومتی پالیسی سے مطمئن ہیں؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔ ہم اپنے طور پر کام کرنے والے حکومتی پالیسیوں کے بارے میں زیادہ معلومات نہیں رکھتے، مگر بہت سے لوگ فائدے اٹھا رہے ہیں

تفکر – اردو ادب سے وابستہ لوگوں کے لئیے کوئی پیغام؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔شو بازی کے بجائے سنجیدہ کام پر توجہ دیجیے ہماری نئی نسل کو اخلاقی اور روحانی تربیت کی بہت ضرورت ہے اور یہ ذمہ داری  ہمارے ادیبوں پر ہی عائد ہوتی ہے

تفکر – ہماری اس کاوش پر کچھ کہنا چاہیں گے؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔یہ ایک مفید سلسلہ ہے اس سے لوگوں کو ایک دوسرے کے بارے میں معلومات حاصل ہوتی ہیں،جان پہچان ایک دوسرے کو قریب لاتی ہے ماحول کو بہتر بناتی ہے آپ لوگ خدمت خلق کر رہے ہیں

تفکر – شعر یا تحریر؟

عالیہ بخاری ہالہ۔۔

"شک کرنا ہے گناہ کسی کے خلوص پر ہالہ محبتوں کو نہ رسوا کیا کرو”

کیوں گھر سے لے کے نکلی تھی میں کانچ کا بدن
سارے جہاں نے ہاتھوں میں پتھر اٹھا لئے
یہ بھی ہے پل صراط ہی اک جان لیجیے
ہالہ رہ حیات پہ خود کو سنبھالیے

پے وفا دوست ہے تو ہنس کے دغادیتی ہے
زندگی تیرے چلن سے مجھے محسوس ہوا

** غزل

چوٹ طبل پر پڑی رے
کوچ گھڑی سر کھڑی رے

ہر جا جگمگ ہو گئی
درد بنا پھلجھڑی رے

اک رستے کا ا نت ہے
ایک ڈگریا کڑی رے

تجھ سے دوری کی خلش
برچھی سینے گڑی رے

روپ اولا دیکھ کر
دنیا کاہے سڑی رے

میری مندری ڈھونڈ دے
جو تھی موتی جڑی رے

بچپن پھر سے اوڑھ لوں
جادو کی دے چھڑی رے

ٹک ٹک میں دیکھوں تمہیں
صدیاں گن اک گھڑی رے

کشت وخون بلا کا تھا
ہالہ خود سے لڑی رے

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…