پاکستان زندہ باد از سماءچودھری

پاکستان زندہ باد   از سماءچودھری

اس کرسی اور طاقت کی ہوس اور روپیہ پیسہ کی سیاست میں پہلے نقصان جو ہوا اور ہو رہا ہے وہ اس ملک کی نایاب اور قیمتی عوام کا ہے ۔ پھر یہ ہوا کہ ہمارے مذہب کو ہر طرح نشانہ بنایا گیا۔

 اور بنایا جا رہا ہے اور ہم پھر خاموش کیوں کہ تماشائیوں میں ہماری عوام معصوم اور عقل مند عوام نمبر ون پہ ہے۔
ہم کیوں بولیں بھائی ۔۔ ہمارا کیا لینا دینا؟ پاکستان ہمارے لیے کیا مطلب رکھتا ہے۔

ہم کو تو بس دھرنوں میں بریانی اور توڑ پھوڑ پہ روپے ملنے چاہے ۔ ہم کو غیرت کہ نام پہ قتل کرنا پسند ہے ۔عزت کے نام پہ قربان ہونا نہیں ۔۔۔
ہم کیسی قوم ہیں؟ چلیں ایک نظر اس پہ ڈال لیں
ہم لالچی، بےحس، منافقت پسند، انسانیت کے درجے سے گرے ہوئے، چور ، تماشائی، اور گمراہ لوگ ہیں
کبھی غور کریں تو احساس ہو ۔۔ میرا سوال ہے کیا ہم میں احساسات نام کی چیز بھی پائی جاتی ہے؟
باخدا۔ میں نے تو بارہا دیکھا ۔۔ کوئی زخمی ہے تو ہم دیکھ کے گذار جاتے ہیں۔ ہمارا کوئی نہیں لگتا
ہاں کھڑے ہو کر کچھ تصاویر لیتے ہیں سوشل میڈیا پہ دھوم کے لیے، فیس بک کے لیے۔
ہم وہ اشتعال انگیز قوم ہیں جس میں سو فیصد لوگوںکو اصل مسئلہ نہیں پتہ ہوتا اور مار دھاڑ میں پیش پیش ۔
کہ ذرا سا رگڑنا اور آگ شروع ۔۔ یہ ہی آگ ،جوش ملک و قوم کی حفاظت کے ہوتا تو یہ دن نہ ہوتے پاکستان کے۔
ہم بہت آرام پسند قوم ہیں ۔ اور ہمارے حکمران اے_سی والے کمرے میں بیٹھ کر ایک دو پرچہ پہ دستخط کرنے والے جن کو گرمی کی شدت کا تو کیا گرمی کا بھی پتہ نہیں ہوتا۔ منہ اور ہاتھ ہلا دینا بہت آسان ہے ۔
وہاں بیٹھ کہ قانون لکھ دیا ۔۔کہ آج سے پاکستان میں یہ ہوگا یہ نہیں ۔

مزدوروں کی جگہ ایک دن کام کر کے دیکھے تو لگ پتہ جائے۔۔ کیا ہوتی ہے محنت کیا ہوتا ہے کام۔
وہی مزدور طبقہ جن کی وجہ سے ملک کا روپیہ پیسہ چلتا ہے۔۔ وہی اس ملک میں بھوک و افلاس ، تنگ نظری اور تنگ دستی کا شکار ہے ۔ بارہ گھنٹے دھوپ میں کام کرنے والے کو پانی بھی صاف نہیں ملتا۔

روز با روز بڑھتی مہنگائی کمر توڑ دیتی ہے۔ نمک مرچ پہ پالنے والے لوگ کیا جانے بڑے لوگوں کا کیک اور جوس والا ناشتہ۔
کبھی نکل کے دیکھو تو احساس ہو پاکستان کے حالات کیا ہے ۔۔

وہ عمر فاروق رضی اللہ عنہ تھے رات رات پھرتے کہ میری وجہ سے کوئی بھوکا سو گیا ۔تو کیا جواب دوں گا ۔ کائنات کے خالق کو۔۔ کہ اللہ نے لوگوں کا خلیفہ بنایا اور میرے دست وسیلہ سے کوئی محروم رہ گیا۔
اور اس ملک کے حکمران ،سیاستدانوں کے آرام و سکون میں کوئی کمی نہ آئے قوم بھوک ہڑتال پہ ہو تو ہم کو کیا۔
ہم نے بھر پیٹ کھایا ہے بس کل پورے ملک میں ہڑتال کرنی ہے یہ بڑی بڑی باتیں کرنی ہیں ہمارے جسم میں طاقت ہونی چاہئے ۔۔ عوام کا کیا بریانی کا ڈبہ اور ساتھ میں بوتل کام تمام ۔۔
اور نعرے بازی یہ ” پاکسان زندہ باد ”
ملک میں

شاہ بکتے ہیں فقیر بکتے ہیں، یہاں صغیروکبیر بکتےہیں
کچھ سرعام اور کچھ پس دیوار،اس شہر میں ضمیر بکتےہیں

تحریر سماءچودھری

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…