غیرت امام حسین علیہ السلام پر زبردست تحریر.. انکار بیعت یزید کے اسباب ؟؟؟؟؟ …

غیرت امام حسین علیہ السلام پر زبردست تحریر..

انکار بیعت یزید کے اسباب ؟؟؟؟؟

مرتبہ ریاض قادری

اس تناظر میں بیعت یزید سے انکار حسینی ؑ کے اسباب کو سمجھنے کی کوشش کی جائے تو اچھی طرح واضح ہو جائے گا کہ امام حسین ؑ نے یزید کی بیعت سے کیوں انکار کیا!، آخر اس کے اسباب و علل کیا ہیں!، کیا امام حسین ؑ یزید کو بادشاہ وقت اور حاکم اسلامی کے عنوان سے قبول نہیں کرتے تھے؟ کیا یزید حکومتی امور کو بحسن و خوبی انجام نہیں دے رہا تھا؟ ان تمام باتوں کو سمجھنے کے لئے امام حسین ؑ کے خطبات اور یزیدی حکومت کے نشیب و فراز کا مطالعہ نہایت ضروری ہے۔ جب امام حسین ؑ کو دربار ولید میں طلب کیا گیا کہ یزید کی بیعت کریں تو آپ ؑ اپنے ہاشمی سورماؤں کی ہمراہی میں دربار ولید کی جانب گامزن ہوئے، لیکن دربار کے نزدیک پہنچنے کے بعد نوجوانوں سے فرمایا: تم سب دروازے پر ٹھہرے رہو، اگر تم یہ محسوس کرو کہ میری آواز بلند ہوگئی ہے تو فوراً دربار میں داخل ہو جانا۔ تمام نوجوانوں نے حکم امام ؑ کے سامنے سرتسلیم خم کیا اور آپ ؑ دربار میں داخل ہوئے… آپ ؑ سے بیعت کا مطالبہ کیا گیا تو آپ ؑ نے جواب دیا: ’’مثلی لا یبایع مثلہ‘‘ مجھ جیسا اس جیسے کی بیعت نہیں کرسکتا۔
انکار بیعت کا پہلا سبب:
یزید فاسق شخص ہے، امام حسین ؑ نے سب سے پہلا سبب یہ بیان کیا ہے کہ میں یزید کی بیعت اس وجہ سے نہیں کرسکتا کیونکہ وہ فاسق ہے، فسق ایک ایسی صفت ہے جو قرآن کریم اور احادیث نبوی ؐ میں مذموم قرار پائی ہے، قرآن میں مادّۂ فسق تقریباً ۵۴ بار استعمال ہوا ہے، لیکن کسی بھی مقام پر مدح و ستائش نہیں ہوئی بلکہ ہر مقام پر مذموم قرار پایا ہے۔ فسق کا ظاہری اثر یہ ہے کہ فاسق انسان قابل ہدایت نہیں ہوتا، جیسا کہ قرآن کریم میں ارشاد ہوتا ہے، (بے شک خداوند عالم، فاسقین کی ہدایت نہیں فرماتا۔

: یوں تو قرآن کریم میں فسق کے آثار و نتائج اور بھی بیان ہوئے ہیں لیکن ہم ان سب آثار سے غض نظر کرتے ہوئے صرف اسی اثر (عدم ہدایت) پر بحث کرتے ہیں۔ جو انسان شقی القلب ہو جائے اور
اس کی ہدایت کے تمام راستے بند ہو جائیں، کیا یہ ممکن ہے کہ وہ دوسرے لوگوں کی ہدایت کرسکے؟ جی نہیں! منطقی قانون ہے کہ ’’فاقد شئے معطی شئے نہیں ہوسکتا‘‘ یعنی جو شخص کسی صفت سے خالی ہو، وہ شخص دوسرے شخص کو اس صفت سے مزین نہیں کرسکتا۔ حاکم اسلامی کی اہم ذمہ داریوں میں سے ایک ذمہ داری یہ بھی ہے کہ امت مسلمہ کو راہِ ہدایت پرگامزن رکھے، اس کو کسی بھی لمحہ راہِ مستقیم سے نہ بھٹکنے دے، جو شخص خود ہی راہِ ہدایت سے منحرف ہو، وہ دوسرے لوگوں کو راہِ ہدایت پر کیسے گامزن رکھے گا!۔ یہی وجہ تھی کہ امام حسین ؑ نے بیعت یزید سے انکار کر دیا کہ یزید … اسلامی حاکم بننے کا مستحق نہیں ہے۔

انکار بیعت کا دوسرا سبب:
یزید شراب خوار ہے: فقہی اعتبار سے شراب، ایسی نجس چیز ہے کہ اگر یہ لباس پر گر جائے تو اس لباس میں نماز باطل ہے، یعنی یہ ایسی چیز ہے کہ حرام ہونے کے ساتھ نجس بھی ہے۔
: شراب کی نجاست خود قرآن کریم سے بھی ثابت ہے، جیسا کہ ارشاد ہوتا ہے: (اے صاحبان ایمان! شراب، جوا اور بت… نجس ہیں اور یہ سب شیطانی عمل ہیں…
قرآن کریم میں شراب کی حرمت پر صراحتاً آیت موجود ہے، جو اس کے حرام ہونے پر دلالت کرتی ہے، ارشاد ہوتا ہے: (اے میرے رسول! وہ لوگ تم سے شراب اور جُوے کے متعلق سوال کرتے ہیں تو ان سے کہہ دیجئے کہ یہ دونوں چیزیں گناہانِ کبیرہ ہیں، ان دونوں چیزوں میں لوگوں کے لئے منافع بھی ہے، لیکن گناہ کے مقابل منافع بہت کم ہے۔

: ڈاکٹری اور حکمت کے اعتبار سے شراب ایسی مہلک شئے ہے، جو انسان کے گُردے اور پھیپھڑوں کو بیکار کر دیتی ہے، خونی فساد، خون کی روانی میں کمی، رعشہ، کینسر، فالج، زخم معدہ، ویٹامین کی کمی، جنونی کیفیت اور عقل کا زائل ہونا جیسے امراض کا سرچشمہ شراب ہی کو قرار دیا گیا ہے۔

): شراب کے نشہ میں چور انسان اپنا آپ کھو بیٹھتا ہے، اس کی عقل زائل ہو جاتی ہے، جس کی وجہ سے اپنے اور بیگانہ میں کوئی فرق محسوس نہیں کر پاتا، اس صورت میں وہ اپنی ماں، بہن، بیٹی اور دیگر محرمات کے ساتھ جنسی رابطہ برقرار کرنے میں کوئی عار محسوس نہیں کرتا، جس انسان کو خود اپنا ہوش نہ ہو، جو اپنے خانوادہ کو خوشحال زندگی نہ دے سکے، اس سے یہ امید کیسے کی جائے کہ وہ پوری قوم کی رہنمائی کرسکتا ہے!، جو شخص اعلاناً حکم خداوندی کی مخالفت کرتا ہو، محرمات الٰہی کو حلال اور حلال الٰہی کو حرام قرار دے، اس کو حاکم اسلامی بننے کا حق نہیں ہے۔ یہی وجہ تھی کہ امام حسین ؑ کے انکار بیعت کا ایک سبب یزید کا شرابی ہونا ہے۔ آپ ؑ نے فرمایا کہ جو شخص حلال خدا کو حرام اور حرام خدا کو حلال شمار کرے، جو ہر وقت اپنے وجود کو شراب میں غرق رکھے، اسے یہ حق نہیں کہ اسلامی مملکت کی باگ ڈور سنبھالے۔ لہٰذا میں یزید کی بیعت نہیں کرونگا، کیونکہ وہ شرابی ہے اور شرابی شخص اسلام کی حفاظت نہیں کرسکتا، بلکہ حاکم اسلامی کو یاد خدا میں غرق ہونا چاہئے۔

انکار بیعت کا تیسرا سبب
: یزید بے گناہوں کا قاتل ہے، اسلامی اعتبار سے قتل کا حکم یہ ہے: (ہم نے یہ مقرر کر دیا ہے کہ نفس کے بدلہ میں نفس، آنکھ کے بدلے میں آنکھ، ناک کے بدلے میں ناک، کان کے بدلہ کان، دانت کے بدلہ دانت اور معمولی زخموں پر قصاص ہے…
: خداوند عالم دوسرے مقام پر بندگان خدا کی صفت بیان کرتے ہوئے فرماتا ہے: (اللہ کے بندے وہ ہیں جو اپنی ہوائے نفس کی خاطر کسی بے گناہ انسان کو قتل نہیں کرتے۔
: اور بے گناہ انسان کے قاتل کی سزا بہت زیادہ سنگین ہے، احادیث میں ایک بے گناہ انسان کا قتل، پوری امت کے قتل سے تعبیر کیا گیا ہے، اسی وجہ سے اس گناہ کو گناہ کبیرہ شمار کیا جاتا ہے۔ صرف ایک بے گناہ انسان کا قتل پوری قوم کے قتل کے برابر ہے تو بے شمار بے گناہوں کا قتل کرنا کتنا سنگین گناہ ہوگا! اور یہ رکیک حرکت یزید کے وجود میں پائی جاتی تھی کہ وہ محترم اور بے گناہ شخصیتوں کا قتل کرتا تھا۔ امام حسین ؑ نے یزید کا چہرہ دنیا کو دکھاتے ہوئے ارشاد فرمایا کہ یزید، محترم اور بے گناہوں کا قاتل ہے، لہٰذا میں اس کی بیعت نہیں کرونگا، حاکم اسلامی کا فریضہ یہ ہوتا ہے کہ امت اسلام کو ہر قسم کے خطرات سے محفوظ رکھے، لیکن اگر حاکم ہی جان کا دشمن ہو جائے تو پھر امت کہاں جائے!۔ امام ؑ نے یہ آشکار کر دیا کہ یزید جیسے گنہگار کو امت اسلام کی حکومت سنبھالنے کا کوئی حق نہیں ہے، بلکہ امت مسلمہ کا حاکم وہ ہوگا، جو اس کی حفاظت کرسکے۔
انکار بیعت کا چوتھا سبب: یزید کھلم کھلا فسق و فجور کا مرتکب ہوتا ہے: فاسق اس شخص کو کہتے ہیں جو مجمع عام میں گناہوں کا مرتکب ہو، اس کی تفصیلی گفتگو پہلے سبب میں کی جاچکی ہے کہ فسق خداوند عالم کے نزدیک بہت ہی مذموم صفت ہے۔ امام حسین ؑ نے ایسے شخص کی بیعت سے انکار کیا ہے، جو مجمع عام میں لوگوں کی ہتک حرمت کرتا ہے اور کسی بھی گناہ کو گناہ تصور نہیں کرتا بلکہ اپنے لئے باعث فخر سمجھتے ہوئے انجام دیتا ہے اور تمام لوگوں کو اپنے گناہوں پر گواہ بناتا ہے۔ روایات شاہد ہیں کہ وہ گناہ جو مخفیانہ طریقہ سے انجام دیا جائے، وہ کسی حد تک قابل بخشش ہے، لیکن جو سرعام انجام دیا جائے تو اس کے لئے معافی کا کوئی خانہ نہیں ہوتا۔ امام حسین ؑ نے یہ سمجھا دیا، دیکھو جو شخص کھلم کھلا گناہوں کا مرتکب ہوتا ہے، وہ اسلامی حکومت کی باگ ڈور سنبھالنے کا مستحق نہیں ہے، کیونکہ اگر خود حاکم ہی گناہوں میں مبتلا ہوگا تو پھر امت کا کیا ہوگا، یہی وجہ تھی کہ آپ ؑ نے فرمایا: ’’علیٰ الاسلام السلام اذا بُلِیَتِ الامۃ بِرَاعٍ مِثْلَ یَزِید‘‘ ایسے اسلام پر دور سے سلام، جس کا حاکم یزید جیسا فاسق و فاجر ہو،
ان اسباب کے علاوہ یزید کے وجود نحس میں جُوا، بندر کا کھیل اور مرغوں کا مقابلہ وغیرہ جیسی بہت سی صفات پائی جاتی تھیں، جو اسلامی حاکم کے شایان شان نہیں ہیں اور ان رکیک صفات کو امام حسین ؑ کی جانب سے انکار بیعت کے اسباب میں شمار کیا جاسکتا ہے۔ صرف یہی نہیں کہ آپ ؑ نے یزید کی بیعت سے انکار کیا بلکہ آپ ؑ نے مختلف مقامات پر یہ بھی واضح کیا کہ اسلامی باگ ڈور سنبھالنے کا حقدار یزید نہیں بلکہ ہم آل رسول ؐ ہیں، جیسا کہ آپ ؑ نے لشکر حر کو خطاب کرتے ہوئے ایک خطبہ میں ارشاد فرمایا: ’’ایھا الناس! انا ابن بنت رسول اللہؐ، ونحن اولیٰ بولایۃ ھذہ الامور علیکم من ھوٓلاء المدعین ما لیس لھم‘‘ اے لوگو! میں بنت رسول کا بیٹا ہوں، ہم لوگ ان امور (امور زعامت، ریاست اور خلافت) میں تم پر ان لوگوں سے زیادہ حق رکھتے ہیں، جو بے بنیاد حکومت کا دعویٰ کر رہے ہیں۔

جب آپ ؑ ولید سے خطاب کرتے ہوئے انکار بیعت کے اسباب بیان کر رہے تھے تو آپ ؑ نے آخر کلام میں ایسا تاریخ ساز جملہ ارشاد فرمایا کہ دنیائے یزیدیت میں زلزلہ آگیا، آپ ؑ نے فرمایا: ’’مثلی لا یبایع مثلہ‘‘ مجھ جیسا یزید جیسے کی بیعت نہیں کرسکتا۔ اگر آپ ؑ یہی فرما کر خاموش ہو جاتے کہ میں یزید کی بیعت نہیں کروں گا تو مورخ کو یہ لکھنے کا موقع مل جاتا کہ ایک شاہ نے دوسرے شاہ کی بیعت سے انکار کیا تھا، لیکن امام حسین ؑ نے اس کا سدّباب کر دیا اور فرمایا کہ انکار بیعت شاہانہ بل بوتہ پر نہیں ہے بلکہ یہاں مزاج کو پرکھا جا رہا ہے کہ کون سا مزاج رحمانی ہے اور کون سا مزاج شیطانی ہے!۔ آپ ؑ نے مورخ کو یہ لکھنے پر مجبور کر دیا کہ حسین علیہ السلام نے بیعت یزید سے انکار نہیں کیا بلکہ حسینی مزاج نے یزیدی مزاج کی بیعت سے انکار کیا ہے۔ قیام قیامت تک کے لئے یہ جملہ محفوظ رہ گیا کہ کوئی بھی حسینی مزاج یزیدی مزاج کے ہاتھوں میں اپنا ہاتھ نہیں دے سکتا..!


Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…