موت ہر طرف خاموش گلیاں زرد رو گونگے مکیں اجڑے اجڑ…

موت

ہر طرف خاموش گلیاں زرد رو گونگے مکیں
اجڑے اجڑے بام و در اور سونے سونے شہ نشیں
ممٹیوں پر ایک گہری خامشی سایہ فگن
رینگ کر چلتی ہوا کی بھی صدا آتی نہیں

اس سکوتِ غم فزا میں اک طلسمی نازنیں
سرخ گہرے سرخ لب اور چاند سی پیلی جبیں
آنکھ کے مبہم اشارے سے بلاتی ہے مجھے
ایک پر اسرار عشرت کا خزانہ ہے وہ چشمِ دل نشیں

منیر نیازی

جواب چھوڑیں