ڈاکٹر علامہ اقبال کا مکمل "شکوه ” کیوں زیاں کار ب…

ڈاکٹر علامہ اقبال کا مکمل "شکوه ”

کیوں زیاں کار بنوں سود فراموش رهوں؟
فکر ے فردا نہ کروں محو ے غم ے دوش رهوں
نالے بلبل کے سنوں اور ہمہ تن گوش رهوں
همنوا ! میں بهی کوئی گل هوں کہ خاموش رهوں؟
جرات آموز میری تاب ے سخن هے مجهہ کو
شکوه اللہ سے ، "خاکم بدهن” هے مجهہ کو
هے بجا شیوه تسلیم میں مشہور هیں هم
قصہء درد سناتے هیں کہ مجبور هیں هم
ساز ے خاموش هیں ، فریاد سے معمور هیں هم
نالہ آتا هے اگر لب پہ تو ، معزور هیں هم
اے خدا ؛ شکوه ے ارباب ے وفا بهی سن لے
خوگر ے حمد سے تهوڑا سا گلہ بهی سن لے
تهی تو موجود ازل سے هی تیری زات قدیم
پهول تها زیب ے چمن ، پر نہ پریشاں تهی شمیم
شرط انصاف هے اے صاحب ے الطاف ے عمیم
بوئے گل پهیلتی کس طرح جو هوتی نہ نسیم ؟
هم کو جمیعت ے خاطر یہ پریشانی تهی
ورنہ امت تیرے محبوب ص کی دیوانی تهی ؟
هم سے پہلے تها عجب تیرے جہاں کا منظر
کہیں مسجود تهے پتهر کہیں معبود شجر
خوگر ے پیکر ے محسوس تهی انساں کی نظر
مانتا پهر کوئی ان دیکهے خدا کو کیوں کر ؟
تجهہ کو معلوم هے لیتا تها کوئی نام تیرا ؟
قوت ے بازوئے مسلم نے کیا کام تیرا !
بس رهے تهے یہیں "سلجوک” بهی "تورانی” بهی
اہل ے چیں چین میں ، ایران میں ساسانی بهی
اسی معمورے میں آباد تهے یونانی بهی
اسی دنیا میں یہودی بهی تهے ، نصرانی بهی
پر تیرے نام پہ تلوار اٹهائی کس نے ؟
بات جو بگڑی هوئی تهی وه بنائی کس نے ؟
تهے ہمیں ایک تیرے معرکہ آرائوں میں
خشکیوں میں کبهی لڑتے ، کبهی دریائوں میں
دیں ازانیں کبهی یورپ کے کلیسائوں میں
کبهی افریقہ کے تپتے هوئے صحرائوں میں
شان آنکهوں میں نہ جچتی تهی جہانداروں کی
کلمہ پڑهتے تهے هم چهاؤں میں تلواروں کی
هم تو جیتے تهے ، کہ جنگوں کی مصیبت کے لیئے
اور مرتے تهے تیرے نام کی عظمت کے لیئے
تهی نہ کچهہ تیغ زنی اپنی حکومت کے لیئے
سر بکف پهرتے تهے کیا دهر میں دولت کے لیئے؟
قوم اپنی جو زرو مال ے جہاں پر مرتی
بت فروشی کے عوض بت شکنی کیوں کرتی
ٹل نہ سکتے تهے ، اگر جنگ میں اڑ جاتے تهے
پائوں شیروں کے بهی میداں سے اکهڑ جاتے تهے
تجهہ سے سر کش هوا کوئی ، تو بگڑ جاتے تهے
تیغ کیا چیز هے؟ هم توپ سے لڑ جاتے تهے
نقش توحید کا هر دل پہ بٹهایا هم نے
زیر ے خنجر بهی یہ پیغام سنایا هم نے
تو هی کہہ دے کہ اکهاڑا در ے خیبر کس نے ؟
شہر قیصر کا جو تها اس کو کیا سر کس نے ؟
توڑے مخلوق خداوندوں کے پیکر کس نے ؟
کاٹ کر رکهہ دیئے کفار کے لشکر کس نے ؟
کس نے ٹهنڈا کیا آتشکدهء ایراں کو ؟
کس نے پهر زنده کیا تزکرہء یزداں کو ؟
کون سی قوم فقط تیری طلب گار هوئی ؟
اور تیرے لیئے زحمت کش ے پیکار هوئی ؟
کس کی شمشیر جہانگیر جہاں دار هوئی ؟
کس کی تکبیر سے دنیا تیری بیدار هوئی ؟
کس کی هیبت سے صنم سہمے هوئے رهتے تهے !
منہ کے بل گر کے "هو اللہ احد” کہتے تهے
آگیا عین لڑائی میں اگر وقت ے نماز
قبلہ رو هو کے زمیں بوس هوئی قوم حجاز
ایک هی صف میں کهڑے هو گئے محمود و ایاز
نہ کوئی بنده رها اور نہ کوئی بنده نواز
بنده و صاحب و محتاج و غنی ایک هوئے
تیری سرکار میں پہنچے تو سبهی ایک هوئے
محفل ے کون و مکاں میں سحر و شام پهرے
مئے توحید کو لے کر صفت ے جام پهرے
کوه میں دشت میں لے کر تیرا پیغام پهرے
اور معلوم هے تجهکو کبهی ناکام پهرے
دشت تو دشت هیں صحرا بهی نہ چهوڑے هم نے
بحر ے ظلمات میں دوڑا دیئے گهوڑے هم نے
صفحہء دهر سے باطل کو مٹایا هم نے
نوع ے انساں کو غلامی سے چهڑایا هم نے
تیرے کعبے کو جبینوں سے بسایا هم نے
تیرے قرآن کو سینوں سے لگایا هم نے
پهر بهی هم سے یہ گلہ هے کہ وفا دار نهیں
هم وفا دار نهیں ، تو بهی تو دلدار نهیں
امتیں اور بهی هیں ، ان میں گنہگار بهی هیں
عجز والے بهی هیں ، مست ے مئے پندار بهی هیں
ان میں کاهل بهی هیں ، غافل بهی هیں هشیار بهی هیں
سینکڑوں هیں کہ تیرے نام سے بیزار بهی هیں
رحمتیں هیں تیری اغیار کے کاشانوں پر
برق گرتی هے تو بیچارے مسلمانوں پر
بت صنم خانوں میں کہتے هیں مسلمان گئے
هے خوشی ان کو کہ کعبے کے نگہبان گئے
منزل ے دهر سے اونٹوں کے حدی خوان گئے
اپنی بغلوں میں دبائے هوئے "قرآن” گئے
خنده زن کفر هے احساس تجهے هے کہ نهیں ؟
اپنی توحید کا کچهه پاس تجهے هے کہ نهیں ؟
یہ شکایت نهیں ، هیں انکے خزانے معمور
نهیں محفل میں جنهیں بات بهی کرنے کا شعور
قہر تو یہ هے کہ کافر کو ملے حور و قصور
اور بے چارے مسلماں کو فقط وعده ے حور
اب وه الطاف نهیں ، هم پہ عنایات نهیں
بات یہ کیا هے کہ پہلی سی مراعات نهیں ؟
کیوں مسلمانوں میں هے دولت ے دنیا نایاب
تیری قدرت تو هے وه جس کی نه حد هے نہ حساب
تو جو چاهے تو اٹهے سینہء صحرا سے حباب
رهرو ے دشت هو سیلی زدهء موج ے سراب
طعن ے اغیار هیں رسوائی هے ناداری هے
کیا تیرے نام پہ مرنے کا عوض خواری هے ؟
بنی اغیار کی اب چاهنے والی دنیا
ره گئی اپنے لیئے ایک خیالی دنیا
هم تو رخصت هوئے اوروں نے سنبهالی دنیا
پهر نہ کہنا هوئی توحید سے خالی دنیا
هم تو جیتے هیں کہ دنیا میں تیرا نام رهے
کہیں ممکن هے کہ ساقی نہ رهے جام رهے ؟
تیری محفل بهی گئی ، چاهنے والے بهی گئے
شب کی آهیں بهی گئیں ، صبح کے نالے بهی گئے
دل تجهے دے بهی گئے ، اپنا صلہ لے بهی گئے
آ کے بیٹهے بهی نہ تهے ، اور نکالے بهی گئے
آئے عشاق گئے وعده فردا لے کر
اب انهیں ڈهونڈ چراغ ے رخ ے زیبا لے کر
درے لیلہ بهی وهی قیس کا پہلو بهی وهی
نجد کے دشت و جبل میں رم ے آهو بهی وهی
عشق کا دل بهی وهی حسن کا جادو بهی وهی
امت ے احمد ے مرسل بهی وهی تو بهی وهی
پهر یہ آزردگی غیر ے سبب ____ کیا معنی ؟
اپنے شیدائوں پہ یہ چشم ے غضب کیا معنی ؟
تجهہ کو چهوڑا تو رسول ص عربی کو چهوڑا ؟
بت گری پیشہ کیا ؟ بت شکنی کو چهوڑا ؟
عشق کو عشق کی آشفتہ سری کو چهوڑا ؟
رسم سلیمان رض و اویس رض قرنی کو چهوڑا ؟
آگ تکبیر کی سینوں میں دبی رکهتے هیں
زندگی مثل بلال حبشی رض رکهتے هیں
عشق کی خیر وه پہلی سی ادا بهی نہ سہی
جاده پیمائی تسلیم و رضا بهی نہ سہی
مضطرب دل صفت ے قبلہ نما بهی نہ سہی
اور پابندئ آئین ے وفا بهی نہ سہی
کبهی هم سے کبهی غیروں سے شناسائی هے
بات کہنے کی نہیں تو بهی تو هرجائی هے
سر ے فاراں پہ کیا دین کو کامل تو نے
اک اشارے میں هزاروں کے لیئے دل تو نے
آتش اندوز کیا عشق کا حاصل تو نے
پهونک دی گرمئ رخسار سے محفل تو نے
آج کیوں سینے همارے شرر آباد نهیں ؟
هم وهی سوختہ ساماں هیں تجهے یاد نہیں ؟
وادئ نجد میں وه شور ے سلاسل نہ رها
قیس دیوانہء نظارهء محمل نہ رها
حوصلے وه نہ رهے هم نہ رهے دل نہ رها
گهر یہ اجڑا هے کہ تو رونق ے محفل نہ رها
اے خوش آں روز کی آئی وه بصد ناز آئی
بے حجابانہ سو ئے محفل ے ماباز آئی
باده کش غیر هیں گلشن میں لب ے جو بیٹهے
سنتے هیں جام بکف نغمہء کوکو بیٹهے
دور ہنگامہء گلزار سے یک سو بیٹھے
تیرے دیوانے هیں منتظر "هو” بیٹهے
اپنے پروانوں کو پهر ذوق ے خود افروزی دے
برق دیرینہ کو فرمان ے جگر سوزی دے
قوم ے آواره عناتاب هے پهر سوئے حجاز
لے اڑا بلبل ے بے پر کو مزاق ے پرواز
مضطرب باغ کے هر غنچے میں هے بوئے نیاز
تو زرا چهیڑ تو دے تشنہء مضراب هے ساز
نغمے بے تاب هیں تاروں سے نکلنے کے لیئے
طور مضطر هے اسی آگ میں جلنے کے لیئے
مشکلیں امت ے مرحوم کی آساں کر دے
مور ے بے مایہ کو ہمدوش ے سلیماں کر دے
جنس ے نایاب ے محبت کو پهر ارزاں کر دے
هند کے دیر نشینوں کو مسلماں کر دے
جوئے خوں می چکد از حسرت ے دیرینہء ما
می تپد نالہ بہ نشتر کدهء سینہ ما _____!
بوئے گل لے گئی بیرون ے چمن راز ے چمن
کیا قیامت هے کہ خود پهول هیں غماز ے چمن
اہد ے گل ختم هوا ٹوٹ گیا ساز ے چمن
اڑ گئے ڈالیوں سے زمزمہ پرواز ے چمن
ایک بلبل هے کہ هے محو ے ترنم اب تک
اس کے سینے میں هے نغموں کا تلاطم اب تک
قمریاں شاخ ے صنوبر سے گریزاں بهی هوئیں
پتیاں پهول کی جهڑ جهڑ کے پریشاں بهی هو ئیں
وه پرانی روشیں باغ کی ویراں بهی هوئیں
ڈالیاں پیرہن ے برگ سے عریاں بهی هوئیں
قید ے موسم طبیعت رهی آزاد اس کی
کاش گلشن میں سمجهتا کوئی فریاد اسکی
لطف مرنے میں هے "باقی” نہ مزا جینے میں
کچهہ مزا هے تو یہی خون ے جگر پینے میں
کتنے بیتاب هیں جوهر میرے آئینے میں
کس قدر جلوے تڑپتے هیں میرے سینے میں
اس گلستاں میں مگر دیکهنے والے هی نهیں
داغ جو سینے میں رکهتے هوں وه لالے هی نهیں
چاک اس بلبل ے تنہا کی نوا سے دل هوں
جاگنے والے اسی بانگ ے درا سے دل هوں
یعنی پهر زنده نئے عہد ے وفا سے دل هوں
پهر اسی بادهء دیرینہ کے پیاسے دل هوں
عجمی خم هے تو کیا ، مئے تو حجازی هے میری
نخمہ هندی هے تو کیا ، لے تو حجازی هے میری

جواب چھوڑیں