آنکھیں‘” اشعار میں ………………………. …

آنکھیں‘” اشعار میں
……………………….

جانے کیا ڈھونڈھتی رہتی ہیں یہ آنکھیں مجھ میں
راکھ کے ڈھیر میں شعلہ ہے نہ چنگاری
کیفی اعظمی
………….
پلا ساقیا بادہ لعل گوں
کہ ہو جائیں سرخ آنکھیں مانند خوں
میر
…………….
دل صفا ہوگیا سینے میں تو پائے یہ شَرَف
جب کہ آنکھیں ہوئی حق ہیں تو مِلا دُرِ نجف
انیس
………………..
الفت ہمدرد میں باز آئیں آنکھیں خواب سے
نیند اوڑ جاتی ہے ہر شب نالہ سرخاب سے
سحر (نواب علی خاں)
…………………
دل مضطرب ہے بر میں آنکھیں ادھر اَدھر ہیں
بیٹھے تو گھر میں ہم ہیں کیا جانے پر کدھر ہیں
جرأت
……………..
کسرم جو غیر پر دیکھا لہو اتر آیا
نہ پوچھ کیوں تری آنکھیں ہیں بن کے ناداں سرخ
مومن
……………….
نیرنگِ حسن دوست سے کر آنکھیں آشنا
ممکن نہیں وگرنہ ہو دیدار ایک طرح
میر تقی میر
………….
تھی خطا ان کی مگر جب آگئے وہ سامنے
جھک گئیں میری ہی آنکھیں رسم الفت دیکھیے
جوش
……………..
روتے روتے میری آنکھیں چل بسیں
بہہ گئیں ہیں کشتیاں طوفان سے
دیوان راسخ دہلوی
…………….
پردہ کیا ان کی جفاؤں کا کہیں فاش ہوا
آج جھیپی ہوئی ہیں اوستم ایجاد آنکھیں
بیخود(ہادی علی)
………………..
قاصد پیامِ شوق کو دینا نہ اتنا طول
کہنا فقط یہ ان سے کہ آنکھیں ترس گئیں
جلیل مانکپوری
……………….
نہیں ثانی ہوا عالم میں اب اے خوش نظر تیرا
اگر چہ ہم نے دیکھی ہیں جہاں میں بے شمار آنکھیں
مرزا علی
…………….
آنکھیں کس پرہیز سے کرتی ہیں دید
جب تلک باہم چھپا ہوتا ہے عشق
انتخاب رام پور
……………………….
آنکھیں ہیں آباد! خواب اُجڑتے جائیں
ایسی آندھی میں! خاک سنورتے جائیں!!
امجداسلام امجد
………………
آنکھیں پتھرا گئیں جوں سنگ سلیمانی آہ
نکلے آنسو تو یہ الفت نے نچوڑے پتھر
جرات
………………..
حیرات حسن سے پتھرا گئیں آنکھیں میری
وہ رہا سامنے لیکن پس دیوار رہا
دیوان راسخ دہلوی
………………
تُو پکارے تو چمک اُٹھتی ہیں آنکھیں میری
تیری صورت بھی ہے شامل تری آواز کے ساتھ
احمد ندیم قاسمی
…………………..
میں نے دیکھی ہیں ہر اک پھول کی آنکھیں پُرنم
کیسے کہہ دوں کہ گلستاں میں بہار آئی ہے
نامعلوم
………………
رشک ریاض خلد ہیں رنگیں عذار دوست
آنکھیں کہاں سے لاؤں جو دیکھوں بہار دوست
شاد عظیم آبادی
……………..
جب سے آنکھیں لگی ہیں ہماری نیند نہیں آتی ہے رات
تکتے راہ رہے ہیں دن کو آنکھوں میں جاتی ہے رات
میر
…………….
جو سات پردے لگانے ہیں تم کو مدنظر
تو کیجیے مری آنکھیں نقاب میں داخل
دیوان راسخ دہلوی
………………..
آنکھیں بے نور ہوئیں بالوں نے بھی بدلا رنگ
صبح پیری سے ہوئی جسم کی تعمیر سفید
رشک
……………
اونگھیے آگے نہ اس بے پیر کے
وہ نمک بھردے گا آنکھیں چیرکے
فرقتی
………….
شب گئیں آنکھیں جھپک اس برق وش کو دیکھکر
آگیا پردے سے باہر اس پھبن سے دفعتاً
معروف
………………
تُو بدلتا ہے تو بے ساختہ میری آنکھیں
اپنے ہاتھوں کی لکیروں سے اُلجھ جاتی ہیں
پروین شاکر
……………….
کیا خاک کوئی دیکھے گا اس پردہ نشیں کو
واں نقش کف پا کی بھی سلوائی ہیں آنکھیں
اسیر اکبر آبادی
…………..
کچھ ایسے اُس کی جھیل سی آنکھیں تھیں ہر طرف
ہم کو سوائے ڈوبنے کے راستہ نہ تھا
امجد اسلام امجد
………….
بَس گئیں یُوں مری آنکھوں میں کسی کی آنکھیں
ڈھونڈتا پھرتا ہوں ہر جھیل میں اپنی آنکھیں
رُوحی کنجاہی
…………….
دیدہ بازی وہ کہاں آنکھیں رہا کرتی ہیں بند
جان ہی باقی نہیں اب دل لگانے کے لئے
اکبر
…………
نرگس ترے بیمار کی تربت پہ نہیں ہیں
یہ دیکھنے کو تیرے نکل آئی ہیں آنکھیں
اسیر اکبر آبادی
……………..
آنکھیں تا عمر ریس بند ترے کوچے میں
حال کھلتے نہ دیا دل کی گرفتاری کا
شاد عظیم آبادی
…………..
نہیں ثانی ہوا عالم میں اب اے خوش نظر تیرا
اگر چہ ہم نے دیکھی ہیں جہاں میں بے شمار آنکھیں
مرزا علی
……….
جب سے اس طفل پر یوش نے دکھائیں آنکھیں
بس مرا کچھ نہ چلا روکے سجائیں آنکھیں
میر ضاحک
…………….
آنکھیں گئیں حال اپنا دکھایا نہ گیا
رخصت ہوئے، درد و غم جو کھایا نہ گیا
پیارے صاحب رشید
…………………
تھی چشم دمِ آخر وہ دیکھنے آوے گا
سو آنکھیں میں جی آیا پردہ نہ نظر آیا
میر تقی میر
…………………
ڈوب جائیں گے ستارے اور بکھر جائے گی رات
دیکھتی رہ جائیں گی آنکھیں گزر جائے گی رات
شہزاد احمد
…………….
امجد صاحب آپ نے بھی تو دنیا گھوم کے دیکھی ہے
ایسی آنکھیں ہیں تو بتاؤ! ایسا چہرا ہو تو کہو!
امجد اسلام امجد
……………..
عہد جوانی رو رو کاٹا پیری میں لیں آنکھیں موند
یعنی رات بہت تھے جاگے صبح ہوئی آرام کیا
میر
…………….
جو آنکھیں ہوں تو ہر قطرے سے شبنم کے یہ ہے روشن
دریں گلشن میسر نیست ترک اھولی کردن
سودا
………….
آنکھوں سے میری ، کون مرے خواب لے گیا
چشمِ صدف سے گو ہر نایاب لے گیا
پروین شاکر
……………..
آنکھیں کھلی رہیں گی تو منظر بھی آئیں گے
زندہ ہے دل تو اور ستمگر بھی آئیں گے
محسن نقوی
………………..
پھر آنکھیں لہو سے خالی ہیں، یہ شمعیں بجھنے والی ہیں
ہم خود بھی کسی کے سوالی ہیں، اس بات پہ ہم شرمائیں کیا
اطیر نفیس
……………
پڑے تھے پاؤں میں چھالے ہزارہا لیکن
تمہاری راہ میں آنکھیں بچھا بچھا کے چلے
وحیدہ نسیم
……………..
جو کوئی نرگس کی خوش چشماں انکھیوں کی سپادے ہے
وہ شوخی سیں اسے گلشن میں خوب آنکھیں دکھاوے ہے
شاکر ناجی
………………….
قاصد پیامِ شوق کو دینا نہ اتنا طول
کہنا فقط یہ ان سے کہ آنکھیں ترس گئیں
جلیل مانکپوری
……………….
ملوں گی تلووں تلے آنکھیں تیری اے نرگس
خصم کو میرے اگر دیکھا بد نظر تونے
جان صاحب
………………
صرف اک نظارہ دے کر لے گیا آنکھیں کوئی
زندگی نے جو دیا اس سے زیادہ چھینا ہے
قتلیل شفائی
………………
آنکھیں کیوں چُرا ئیے ابرِ بہار سے
افسوس جوشِ دیدہ پرتم نہیں رہا
الماسِ درخشاں
…………
جب ہم نشیں نے اس کی باتیں سنائیاں ہیں
بے اختیار اس دم آنکھیں بھرآئیاں ہیں
جسونت سنگھ
………………..
بہت آنکھیں ہیں فرش راہ چلنا دیکھ کر لازم
کف نازک میں کانٹا چبھ نہ جائے کوئی مژگاں کا
داغ
…………………
یہ گھن زلفوں کا اور یہ سرمہ کیں آنکھیں معاذ اللہ
وہ دیوانہ ہے اس کو دیکھ کر جو ہونہ سودائی
عزیز لکھنوی
……………..
دل کو تو کھونٹ کھونٹ کے رکھا
مانتی ہی نہیں مگر آنکھیں
مہتابِ داغ
……………
لگ رہی ہیں ترے عاشق کی جو آنکھیں چھت سے
تجکو دیکھا ہے مگر ان نے لب بام کہیں
تاباں
……………..
آنکھیں جیسے کومل کرنیں‘ چاندی جیسے ہاتھ
پریتم تم کو چاند کہوں یا پورے چاند کی رات
جمیل الدین عالی
………………
ظرفِ دل دیکھا تو آنکھیں کرب سے پتھرا گئیں
خون رونے کی تمنا کا یہ خمیازہ نہ تھا
احمد فراز
……………….
وہ آنکھیں آج ستارے تراشتی دیکھیں
جنہوں نے رنگِ تبسّم دیا زمانے کو
بیگم سحاب قزلباش
……………..
رشک ریاض خلد ہیں رنگیں عزار دوست
آنکھیں کہاں سے لاؤں جو دیکھوں بہار دوست
شاد عظیم آبادی
………………….
گریوں ہی ہے تو واں نہ بولینگے
اپنی آنکھیں کوئی سیے کیسے
نظام
……………..
کہیے تو نیزہ بازوں کو ہم دیکھ بھال لیں
تیوری کوئی چڑھائے تو آنکھیں نکال لیں
انیس
………………..
لاکھ کوشش کرو احوال چھپانے کی مگر
روشنی ڈالتی ہیں حال پہ پھر بھی آنکھیں
روحی کنجاہی
……………….
ایسا نہ ہو کہ پیارے دم میں کسی کے آجا
جو بد نگہ سے دیکھے آنکھیں نکال کھاجا
فدوی لاہوری
…………..
میں قربان ہوں تیری نظروں کے یار
ملاتے ہی آنکھیں گمایا مجھے
شاہ نیاز
……………
ہمارا دل سویرے کا سنہرا جام ہوجائے
چراغوں کی طرح آنکھیں جلیں جب شام ہوجائے
بشیر بدر
…………………
مَیں کہتا ھوں اُسے مت دیکھو لیکن
مری آنکھیں مری سُنتی کہاں ھیں !
رحمان فارس
……….
آنکھوں سے میری کون مرے خواب لے گیا
چشم صدف سے گو ہر نایاب لے گیا
پروین شاکر


جواب چھوڑیں