آتے آتے، میرا نام سا ره گیا​ اس کے ہونٹوں پہ کچھ ک…

آتے آتے، میرا نام سا ره گیا​
اس کے ہونٹوں پہ کچھ کانپتا ره گیا​

وه میرے سامنے ہی گیا اور میں​
راستے کی طرح دیکهتا ره گیا​

جهوٹ والے کہیں سے کہیں بڑھ گئے​
اور میں تها کہ سچ بولتا ره گیا​

آندهیوں کے ارادے تو اچھے نہ تهے​
یہ دیا کیسے جلتا ہوا ره گیا​

ان کی آنکهوں سے کیسے چهلکنے لگا​
میرے ہونٹوں پہ جو ماجرا ره گیا​

ایسے بچهڑے سبهی رات کے موڑ پر​
آخری ہمسفر راستہ ره گیا​

سوچ کر آؤ کوئے تمنا ہے یہ​
جان من جو یہاں ره گیا ره گیا​

وسیم بریلوی​
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


جواب چھوڑیں