اس زلف کی توصیف بتائی نہیں جاتی اک لمبی کہانی ہے …

اس زلف کی توصیف بتائی نہیں جاتی
اک لمبی کہانی ہے سنائی نہیں جاتی

دل ہے کہ مرا جاتا ہے دیدار کی خاطر
ہم ہیں کہ ادھر آنکھ اٹھائی نہیں جاتی

اشکوں سے کبھی سوزِ جگر کم نہیں ہوتا
یہ آگ تو پانی سے بجھائی نہیں جاتی

دل یہ تو ترا داغ‌ِ محبت نہ چھپے گا
آئینے سے تصویر چھپائی نہیں جاتی

یا رب کہاں لے جاؤں میں حسرت زدہ دل کو
یہ لاش تو اب مجھ سے اٹھائی نہیں جاتی

آہوں سے کمی غم میں نہ ہوگی دلِ ناداں
پھونکوں سے کبھی آگ بجھائی نہیں جاتی

کیوں اشکِ ندامت نہ بہائیں جگرؔ آنکھیں
جو دل میں لگی ہے وہ بجھائی نہیں جاتی

جگرؔ جالندھری

المرسل: فیصل خورشید


Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…