بھکشو نے بدھ سے پوچھا ، ’سپھل ہونے کی راہ کیا ہے؟‘…

بھکشو نے بدھ سے پوچھا ، ’سپھل ہونے کی راہ کیا ہے؟‘ جواب آیا۔ ’بالک ، کامیابی لمحہ موجود کو معنی دینا ہے۔ سوال کیا ، ’ معنی باہر سے آتا ہے؟‘ تھوڑا تامل اور پھر جواب ملا ، ’معنی کے لیے جستجو کرنا پڑتی ہے۔ اجالے کی سہائتا کی جاتی ہے‘ بھکشو نے بے بسی سے کہا، ’مہاراج مجھے سچ کہاں سے ملے گا‘۔ جواب دیا ’اپنے بھیتر میں رہ اور باہر پر آنکھ رکھ۔ زمین پر آوازیں بہت ہیں ، ساگر میں مچھلیاں بہت ہیں اور سچ کی صورت لمحہ بہ لمحہ بدلتی ہے‘۔ ’ہے مہاراج …. پیڑ اور مکان گزرتے جا رہے ہیں اور سفیدی تو اب مرغی کے انڈے برابر رہ گئی ہے‘۔بدھ نے دھیرج بندھاتے ہوئے وچن دیا ، ’تو چنتا مت کر۔ گیا کی ترائیوں میں برگد کے پیڑ بہت ہیں اور رات ابھی باقی ہے‘۔……… انتظار حسین صاحب


بشکریہ

بھکشو نے بدھ سے پوچھا ، ’سپھل ہونے کی راہ کیا ہے؟‘ جواب آیا۔ ’بالک ، کامیابی لمحہ موجود کو معنی دینا ہے۔ سوال کیا ، ’ مع…

Posted by Asif Jilani on Thursday, December 7, 2017

جواب چھوڑیں