( غیــر مطبــوعــہ ) تری آنکھیں سمُندر ہیں تری …

( غیــر مطبــوعــہ )

تری آنکھیں سمُندر ہیں

تری پہلی نظر سے زندگی آغاز ہوتی ہے
تری آنکھیں عبادت گاہ سی روشن
تری آنکھیں پرندوں سے بھری جھیلیں
تری آنکھیں بڑی ساحر
نہ جانے کن زمانوں سے پلٹتی ہیں
ستارے، ان سے اپنا راستہ دریافت کرتے ہیں
زمیں آداب کہتی ہے
تری آنکھیں
مری آنکھوں میں سمٹی
اجنبی لمحوں کے منظر سے گزرتی ہیں
تری آنکھیں
مری آنکھوں میں ہر پل مسکراتی ہیں
تری آنکھیں محبّت ہیں
محبّت آگ سے تعبیر ہوتی ہے
وفا تصویر ہوتی ہے
تری صورت میں ڈھلتی ہے
تری آنکھوں سی ہنستی ہے
جہاں سے تُو گزر جائے
وہ رستہ تا ابد مہکے
جہاں پر تُو ٹھہَر جائے
وہاں اک باغ کِھل جائے
اگر تُو آسماں کو اک نظر دیکھے
ترے قدموں میں جھک جائے

پرندے
پیڑ
دریا
خواب
خوش بُو
سب ترے چاکر
ترے ابروکے ہلکے سے اشارے پر ہوئے حاضر
تری آنکھیں مقدّر کو بدلتی ہیں
تری آنکھیں سمُندر ہیں

( فہیــــــمؔ شــناس کـاظِــمـی )

جواب چھوڑیں