عہد پُختہ کیا رِندوں نے یہ پیمانے سے خاک ہو جائیں …

عہد پُختہ کیا رِندوں نے یہ پیمانے سے
خاک ہو جائیں گے نِکلیں گے نہ میخانے سے

میرے ساقی ہو عطا مُجھ کو بھی پیمانے سے
فیض پاتا ہے زمانہ ترے میخانے سے

یک بہ یک اور بھڑک اُٹھتا ہے سمجھانے سے
کوئی کیا بات کرے آپ کے دیوانے سے

رِند مِل مِل کے گلے روئے تھے پیمانے سے
جب مری لاش اُٹھائی گئی میخانے سے

مُجھ سے پُوچھے کوئی کیا مُجھ پہ جُنوں میں گُزری
قیس و فرہاد کے قِصّے تو ہیں افسانے سے

واعظِ شہر کی توبہ نہ کہیں ٹوٹی ہو
آج "ہُو حق” کی صدا آتی ہے مے خانے سے

كون يہ آگ لگا ديتا ہے، معلوم نہيں
روز اٹھتا ہے دھواں سا مرے كاشانے سے

ترکِ ثابت قدمی ایک قیامت ہو گی
اور گھِر جاؤ گے آلام میں گھبرانے سے

پا لیا آپ کو اِقرارِ مُحبت نہ کریں
بن گئی بات مری آپ کے شرمانے سے

رِند کے ظرف پہ ساقی کی نظر رہتی ہے
اِسے چُلّو سے پلا دی، اُسے پیمانے سے

شیخ کے ساتھ یہ رِندوں پہ قیامت ٹُوٹی
پینے والے بھی نِکالے گئے میخانے سے

باغباں پھونک، مگر شرط يہ ہے گلُشن ميں
آگ پھولوں پہ نہ برسے ميرے خَس خانے سے

اس سے بہتر نہ ملے فرشِ سكينت شايد
ہم پُكاريں گے اُنہيں بيٹھ كے ويرانے سے

بات سُنتے جو نصیرؔ آپ تو اِک بات بھی تھی
بات سُنتے نہیں کیا فائدہ سمجھانے سے

بے سہارا ہوں بُڑھاپے میں کہاں جاؤں نصیرؔ
اب تو جنازہ ہی اُٹھے گا مرا میخانے سے

(پیر نصیر الدین نصیرؔ)​

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…