ہم نیں سجن سنا ہے اس شوخ کے دہاں ہے لیکن کبھو نہ …

ہم نیں سجن سنا ہے اس شوخ کے دہاں ہے
لیکن کبھو نہ دیکھا کیتا ہے اور کہاں ہے

ڈھونڈا ہزار تو بھی تیرا نشاں نہ پایا
لشکر میں گل رخاں کے تیری مثل کہاں ہے

اب تشنگی کا روزہ شاید کھلے ہمارا
شام و شفق سجن کا مسی و رنگِ پاں ہے

دل میں کیا ہے دعوا انکھیاں ہوئی ہیں منکر
تیری کمر کا جھگڑا ان دو کے درمیاں ہے

رہتا ہوں اے پیارے قدموں تلے تمھارے
جس راہ آوتے ہو عاجز کا ویں مکاں ہے

تجھ خط پشتِ لب میں تس کا سخن ہوا سبز
اس کی زباں دہن میں مانندِ برگِ پاں ہے

پیری سیں قد کماں ہے ہر چند آبروؔ کا
اس نوجواں کی خاطر دل اب تلک کشاں ہے

(آبروؔ شاہ مبارک)​

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…