شہریار جہاں میں ہونے کو اے دوست! یُوں تو سب ہوگا …

شہریار

جہاں میں ہونے کو اے دوست! یُوں تو سب ہوگا
تِرے لبوں پہ مِرے لب ہوں، ایسا کب ہوگا

اِسی اُمید پہ کب سے دھڑک رہا ہے دِل
تِرے حضُور کسی روز یہ طلب ہوگا

مکاں تو ہوں گے، مکینوں سے سب مگر خالی
یہاں بھی دیکھو تماشا یہ ایک شب ہوگا

کوئی نہیں ہے جو بتلائے میرے لوگوں کو
ہَوا کے رُخ کے بدلنے سے کیا غضب ہوگا

نہ جانے کیوں مجھے لگتا ہے ایسا، حاکمِ شہر !
جو حادثہ، نہیں پہلے ہُوا وہ اب ہوگا

شہریار
(نیند کی کرچیں)


Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…