بچھڑتے لمحوں کی بے صدا جلد باز رت میں جب کبھی اس ک…

بچھڑتے لمحوں کی
بے صدا جلد باز رت میں
جب کبھی اس کے ہونٹوں کی نرم چھاؤں
مجھے جدائی کی دھوپ دے کر
حواس کی انگلیوں سے
دامن چھڑا رہی تھی
تمام رسموں تمام قسموں کی جلتی شمعیں
بجھا رہی تھی
میں اس کی آنکھوں میں
چھوڑ آیا تھا خواب اپنے
وہ خواب جن کی تمازتوں میں
"تمام سچ تھا ”
وہ خواب تکمیل آرزو کی نشانیاں تھے
وہ خواب میری وفا کی اجلی کہانیاں تھے
.
میں سوچتا ہوں
کہ اب کبھی چاندنی میں بھیگی ہوئی ہوائیں
جب اس کی آنکھوں سے
نیند کا کچھہ خمار ،اس کے بدن کی خوشبو سے چور
کوئی پیام لائیں
تو میں بھی مانگوں
حساب اپنے
میں اس کی آنکھوں سے مسکرا کر
طلب کروں
پھر سے خواب اپنے
” میں اس کو بھیجوں عذاب اپنے ”
.
محسن نقوی

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں
1 تبصرہ
  1. 918 kiss trusted کہتے ہیں

    Hey I know thgis iss off tolic but I was wondering if yyou knew of anyy widgets I could
    add to my blog hat automatically tweet my newest twitter
    updates. I’ve been looking for a plug-in like thijs for quite sopme
    time and was hoping mayb yoou would have some experience
    with something like this. Please let me know iif you run innto anything.
    I truly enjoy reading your blog and I look forward to your new updates. http://www.mo1skaka.com/vb/member.php?u=406578

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…