اضغر گونڈوی رُخِ رنگیں پہ موجیں ہیں تبَسّم ہائے پ…

اضغر گونڈوی

رُخِ رنگیں پہ موجیں ہیں تبَسّم ہائے پنہاں کی
شُعائیں کیا پڑیں، رنگت نِکھر آئی گلِستاں کی

یہیں پہ ختْم ہوجاتی ہیں بحثیں کُفر و اِیماں کی
نقاب اُس نے اُلٹ کر یہ حَقِیقت ہم پہ عُریاں کی

روَانی رنگ لائی دِیدۂ خُوں نابہ افشاں کی
اُتر آئی ہے اِک تصوِیر دامن پر گُلِستاں کی

حقیقت کھول دیتا میں جنُوں کے رازِ پنہاں کی
قسم دے دی ہے لیکن قیس نے چاکِ گریباں کی

مِری اِک بیخودی میں سینکڑوں ہوش و خِرَد گُم ہیں
یہاں کے ذرّہ ذرّہ میں ہے وُسعت اِک بیاباں کی

مُجھی سے بِگڑے رہتے ہیں، مُجھی پر ہے عتاب اُن کا
ادائیں چُھپ نہیں سکتِیں نوازشہائے پنہاں کی

اسِیران بَلا نے آہ ، کُچھ اِس درد سے کھینچی
نگہباں چیخ اُٹّھے، ہِل گئی دیوار زنداں کی

نِگاہِ یاس و آہِ عاشقاں و نالۂ بُلبُل
معاذاللہ! کتنی صُورَتیں ہیں اُنکے پیکاں کی

اسِیرانِ بَلا کی حسرَتوں کو آہ کیا کہیئے
تڑپ کے ساتھ اُونچی ہوگئی دِیوار زِنداں کی

مولانا اضغر گونڈوی


جواب چھوڑیں