وہ نازنیں یہ نزاکت میں کچھ یگانہ ہوا جو پہنی پھولو…

وہ نازنیں یہ نزاکت میں کچھ یگانہ ہوا
جو پہنی پھولوں کی بَدّھی تو دردِ شانہ ہوا

شہید و ناز و ادا کا ترے زمانہ ہوا
اڑایا مہندی نے دل، چور کا بہانہ ہوا

شب اس کے افعیِ گیسو کا جو فسانہ ہوا
ہوا کچھ ایسی بندھی گُل چراغِ خانہ ہوا

نہ زلفِ یار کا خاکہ بھی کر سکا مانی
ہر ایک بال میں کیا کیا نہ شاخسانہ ہوا

توانگروں کو مبارک ہو شمعِ کافوری
قدم سے یار کے روشن غریب خانہ ہوا

گناہ گار ہیں محرابِ تیغ کے ساجد
جھکایا سر تو ادا فرضِ پنج گانہ ہوا

غرورِ عشق زیادہ غرورِ حسن سے ہے
اُدھر تو آنکھ پھری، دم ادھر روانہ ہوا

دکھا دے زاہدِ مغرور کو بھی اے صنم آنکھ
جمالِ حور کا حد سے سوا فسانہ ہوا

بھرا ہے شیشۂ دل کو مئے محبت سے
خدا کا گھر تھا جہاں واں شراب خانہ ہوا

ہوائے تند نہ چھوڑے مرے غبار کا ساتھ
یہ گردِ راہ کہاں خاکِ آستانہ ہوا

خدا کے واسطے کر یار چینِ ابرو دور
بڑا ہی عیب لگا جس کماں میں خانہ ہوا

ہوا جو دن تو ہوا اُس کے پاسِ رسوائی
جو رات آئی تو پھر نیند کا بہانہ ہوا

نہ پوچھ حال مرا چوبِ خشک صحرا ہوں
لگا کے آگ مجھے کارواں روانہ ہوا

نگاہِ نازِ بتاں سے نہ چشمِ زخم بھی رکھ
کسی کا یار نہیں فتنۂ زمانہ ہوا

اثر کیا طپشِ دل نے آخ اس کو بھی
رقیب سے بھی مرا ذکرِ غائبانہ ہوا

ہوائے تند سے پتّہ اگر کوئی کھڑکا
سمندِ بادِ بہاری کا تازیانہ ہوا

زبانِ یار خموشی نے میری کھلوائی
میں قفل بن کے کلیدِ درِ خزانہ ہوا

کیا جو یار نے کچھ شغلِ برق اندازی
چراغِ زندگیِ خضر تک نشانہ ہوا

رہا ہے چاہِ ذقن میں مرا دلِ وحشی
کنویں میں جنگلی کبوتر کا آشیانہ ہوا

خدا دراز کرے عمرِ چرخِ نیلی کو
یہ بے کسوں کے مزاروں کا شامیانہ ہوا

نہیں ہے مثلِ صدف مجھ سا دوسرا کم بخت
نصیبِ غیر مرے منہ کا آب و دانہ ہوا

حنائی ہاتھوں سے چوٹی کو کھولتا ہے یار
کہاں سے پنجۂ مرجاں حریفِ شانہ ہوا

دکھائی چشمِ غزالاں نے حلقۂ زنجیر
ہمیں تو گوشۂ صحرا بھی قید خانہ ہوا

ہمیشہ شام سے ہمسائے مر رہے آتشؔ
ہمارا نالۂ دل گوش کو فسانہ ہوا

(خواجہ حیدر علی آتشؔ)​


جواب چھوڑیں