علی سردار جعفری وقت ہے فرمانِ عشق و عاشقی …

علی سردار جعفری

وقت ہے فرمانِ عشق و عاشقی جاری کریں​
حسن والوں سے کہو سامانِ دلداری کریں​

موجِ مے آنکھوں میں لہرائے، بدن میں موجِ نور​
عارضوں سے چاند سورج پر ضیا باری کریں​

کھول۔ کر بندِ قبا، بکھرا کے زُلفِ عَنبریں​
عشقِ رسوا کی پذیرائی کی تیاری کریں​

رہگذاروں میں جلائیں عشق و مستی کے چراغ​
روح کے یخ بستہ گوشوں میں شرر باری کریں​

آبنوسی، صندلی، سیمیں تنوں کے رقص سے​
ساری دُنیا پر جُنوں کی کیفیت طاری کریں​

جشنِ بیزاری منائیں ظلم و نخوت کے خلاف​
قریہ قریہ شہر شہر آوارہ رفتاری کریں​

لذتِ شہد و شکر ہو خوش بیانی میں مگر​
اہلکارانِ ستم سے تلخ گُفتاری کریں​

تاجدارانِ جہاں کے سامنے سر خم نہ ہوں​
نازنینانِ جہاں کی ناز برداری کریں​

کج کلاہانِ جنوں کو دیں خراجِ تہنیت​
بوسہ ہائے لب سے روح و دل پہ گُلکاری کریں​

دوسرا عقل و خرد ہے جب ریاکاری کا نام​
کیوں نہ اُس کو غرقِ سرمستی و سرشاری کریں​

ساری دنیا جل رہی ہے نفرتوں کی آگ میں​
عشق والے آئیں اب دنیا کی سرداری کریں​

مشرق و مغرب میں جا کر خونِ انساں کیوں بہائیں​
اس سے بہتر ہے کہ میخانوں میں مے خواری کریں​

فخر سے پہنیں گلے میں تمغۂ آوارگی​
اور یوں انسانیت کا جشنِ بیداری کریں​

المرسل: فیصل خورشید


جواب چھوڑیں