تُو امیرِ حرم مَیں فقیرِ عجم تیرے گُن اور یہ لب مَ…


تُو امیرِ حرم مَیں فقیرِ عجم
تیرے گُن اور یہ لب مَیں طلب ہی طلب
تُو عطا ہی عطا تُو کُجا من کُجا

تُو ابد آفریں مَیں ہُوں دو چار پل
تُو یقیں مَیں گُماں مَیں سُخن تُو عمل
تُو ہے معصُومیت مَیں نِری مَعصِیَت
تُو کرم مَیں خطا تُو کُجا من کُجا

تُو ہے اِحرامِ انوار باندھے ہُوئے
مَیں دُرُودوں کی دستار باندھے ہُوئے
کعبہِ عِشق تُو مَیں تیرے چار سُو
تُو اثر مَیں دُعا تُو کُجا من کُجا

تُو حقیقت ہے مَیں صِرف اِحساس ہُوں
تُو سمندر مَیں بھٹکی ہُوئی پیاس ہُوں
میرا گھر خاک پر اور تیری رہگزر
سدرۃُ المُنتہٰی تُو کُجا من کُجا

میرا ہر سانس تو خُوں نِچوڑے میرا
تیری رحمت مگر دِل نہ توڑے میرا
کاسہِ ذات ہُوں تیری خیرات ہُوں
تُو سخی مَیں گدا تُو کُجا من کُجا

ڈگمگاؤں جو حالات کے سامنے
آئے تیرا تصوُّر مُجھے تھامنے
میری خوش قِسمتی مَیں تیرا اُمّتی
تُو جزا مَیں رضا تُو کُجا من کُجا

میرا ملبُوس ہے پردہ پوشی تیری
مُجھ کو تابِ سُخن دے خموشی تیری
تُو جَلی مَیں خفی تُو اٹل مَیں نفی
تُو صِلہ مَیں گِلہ تُو کُجا من کُجا

دُوریاں سامنے سے جو ہٹنے لگیں
جالیوں سے نِگاہیں لِپٹنے لگیں
آنسُوؤں کی زباں ہو میری ترجماں
دِل سے نِکلے صدا تُو کُجا من کُجا۔۔۔!

کلام حضرت مظفرؔ وارثی
آواز رفاقت علیخاں و ہمنوا

جواب چھوڑیں