موسمِ کربِ انتظار بھی جُھوٹ دل نہ مانے تو ، وصلِ ی…

موسمِ کربِ انتظار بھی جُھوٹ
دل نہ مانے تو ، وصلِ یار بھی جُھوٹ

جھوٹ ھے ، سب خزاں کا خمیازہ
عکس رنگِ رُخِ بہار بھی جُھوٹ

موت ، تیری طلب بھی لغزش لب
زندگی ، تیرا اعتبار بھی جُھوٹ

وسعت داستان شوق، غلط
کوششِ حرفِ اختصار بھی جُھوٹ

خلقتِ شہر مصلحت پیشہ
ورنہ ، فرمانِ شہر یار بھی جُھوٹ

نارسائی کو راستے مشکل
کور چشمی کو کوھسار بھی جُھوٹ

دُور سے پیاس کو سراب ، چناب
اھلِ صحرا کو ، آبشار بھی جُھوٹ

دسترس کا طِلسم ھے ، ورنہ
ساعت جبر و اختیار بھی جُھوٹ

پیرھن ، خونِ دل میں تر کر لو
ورنہ ، دامانِ تار تار بھی جُھوٹ

صِرف ، اُس کا سفر ھے سچ محسن
میری راہ بھی ، میرا غبار بھی جُھوٹ

”محسن نقوی“


بشکریہ
https://www.facebook.com/Inside.the.coffee.house

جواب چھوڑیں