صدا ھُوں اپنے پیار کی جہاں سے بے نیاز ھُوں کسی پہ …


صدا ھُوں اپنے پیار کی
جہاں سے بے نیاز ھُوں
کسی پہ جو نہ کُھل سکے
وہ زندگی کا راز ھُوں.

صدا ھُوں اپنے پیار کی.

رچے ھیں میرے زمزمے
ھواؤں میں گھٹاؤں میں
میرے گلے کا نور ھے
گھلا ھُوا فضاؤں میں

کہوں تو چاندنی ھُوں میں
چِھڑوں تو اک ساز ھُوں
کسی پہ جو نہ کُھل سکے
وہ زندگی کا راز ھُوں

صدا ھُوں اپنے پیار کی.

سنے اگر مری صدا
تو چلتے کارواں رُکیں
بھلا کے اپنی گردشوں کو
سات آسماں رُکیں

میں حسن کا غرور ھُوں
میں دلبری کا ناز ھُوں
کسی پہ جو نہ کُھل سکے
وہ زندگی کا راز ھُوں

صدا ھُوں اپنے پیار کی.

"قتیل شفائی”

بشکریہ
https://www.facebook.com/Inside.the.coffee.house

جواب چھوڑیں