محمد منشاء الرحمن خاں منشاء پھولوں کو تبسم کی ادا …

محمد منشاء الرحمن خاں منشاء
پھولوں کو تبسم کی ادا تجھ سے ملی ہے
گلشن کو جنوں خیز ہوا تجھ سے ملی ہے

اے خلد نظر جان چمن روح بہاراں
شبنم کو یہ نمناک ضیا تجھ سے ملی ہے

بزم مہ و انجم کو بھی اے شاہد رعنا
یہ نور سے بھرپور فضا تجھ سے ملی ہے

گلگوں لب و رخسار کے صدقہ میں شفق کو
یہ رنگ کی دولت بخدا تجھ سے ملی ہے

اس روئے ضیا بار پہ یہ ابر کا گھونگٹ
بجلی کو یقیناً یہ حیا تجھ سے ملی ہے

ساقی تری آنکھوں کی قسم ساغر مے کو
یہ کیفیت ہوش ربا تجھ سے ملی ہے

اے دوست تیری نیم نگاہی کے تصدق
دل کو خلش روح فزا تجھ سے ملی ہے

کونین کے ہر راز کو محرم جسے کہئے
منشاؔ کو وہی فکر رسا تجھ سے ملی ہے

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…