مظفر علی خان اسیر لکھنوی کی وفات Feb 07, 1882 آج م…

مظفر علی خان اسیر لکھنوی کی وفات
Feb 07, 1882
آج مصحفیؔ کے شاگرد ،ممتاز شاعر اسیرؔ لکھنوی کی برسی ہے ۔

مظفر علی خاں ۔ ولادت 1800ء میٹھی (یو پی) تلمذ : مصحفیؔ ۔ واجد علی شاہ کے مصاحب خاص تھے ۔ 7 فروری سنہ 1882 عیسوی کو اردو کے مشہور شاعر اسیر لکھنوی کا انتقال ہوا ۔ان کا اصل نام مظفر علی خان تھا ۔انہوں نے فارسی کی تعلیم اپنے والد سے اور عربی اپنے چچا مولوی سید علی اور علمائے فرنگی محل سے حاصل کی ۔ جبکہ شاعری میں مصحفی کی شاگردی اختیار کی اور رفتہ رفتہ اتنی مہارت حاصل کرلی کہ خود استاد بن گئے ۔ ان کے شاگردوں میں واسطی ، شوق قدوائی اور امیر مینائی معروف ہیں ۔ اسیر لکھنوی نواب واجد علی شاہ کے دور حکومت میں تدبیر الدولہ بہادر جنگ اور مدبر الملک کے خطاب سے سرفراز ہوئے اور آٹھ نو سال تک ان کے مصاحب خاص رہے ۔ Â 1857 کی جنگ آزادی کے بعد وہ رام پور چلے گئے اور 7 فروری 1882 کو لکھنو میں انتقال کیا ۔ان کی تصانیف میں اردو کے چھ دیوان ، فارسی کا ایک دیوان ، ایک مثنوی دُرَۃُ التّاج اور علم عروض پر ایک رسالہ شامل ہے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
منتخب کلام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چھپ گۓ وہ داغِ عشق چشم جادہ رہ گیا
یادگار آہو کا نقش پاۓ آہو رہ گیا

جتنی زنجیریں تھیں توڑیں میری وحشت نے مگر
پاؤں میں اک حلقہء زنجیر گیسو رہ گیا

قتل کرتی ہیں وہ آنکھیں لعل لب خاموش ہیں
معجزہ جاتا رہا عالم میں جادو رہ گیا

ترک عزت کی تو آیا حسن کا جلوہ نظر
آبرو سے مد ہوا زائل تو آبرو رہ گیا

مصحفیؔ و میرؔ و سوداؔ سب زمانے سے گۓ
اے اسیرؔ ان شاعروں میں اب فقط تو رہ گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پر تو پڑا ہے جب سے اس چشم نرگسی کا
لبریز مے ہے مینا سونے کی آرسی کا

شیشہ رہے بغل میں جامِ شراب لب پر
ساقی یہی مزہ ہے دو دن کی زندگی کا

ابرو وہ ماہِ نو ہے لرزاں ہے مہر جس سے
مشرق تلک ہے شہرہ اس تعغ مغربی کا

ہندی میں آٹھ دیواں لکھے اسیرؔ کیسے
ہے روضہء مثمن کیا خوب مصحفیؔ کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوروں کو اس نے اذن دیا بار عام کا
ہم ڈھونڈتے ہیں دور سے موقع سلام کا

تشبیہ دوں میں کیا ترے چہرے سے اے قمر
سارا بدن سپید ہے ماہ تمام کا

ہم جانتے ہیں غیر سے رکھتے ہو راہ تم
پرچہ لگا ہے ہم کو تمھارے پیام کا

وقت نماز ہاتھ میں جس کے ہوں بت اسیرؔ
میں معتقد نہیں کبھی ایسے امام کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مری نظر سے وہ غائب ہوۓ نظر کی طرح
بدن تمام چرانے لگے کمی کی طرح

ہمارا گوشہء عزلت بھی ہے صدف آسا
بچاۓ بیٹھے ہیں ہم آبرو گہر کی طرح

اسیرؔ گریہء الفت بھی ہے کوئی طوفاں
کہ ایک اشک میں دل بجھ گیا شرر کی طرح
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بیدلوں سے یہ کمی شاہد رعنا ہو کر
جاں مردوں سے چھپاتے ہو مسیحا ہو کر

پاسِ کافر ہے مجھے خاطرِ دیندار بھی ہے
روز کعبہ کو میں جاتا ہوں کلیسا ہو کر

ہم تری تیغ کو کیا یاد کریں گے قاتل
پانی پیاسوں کو پلاتی نہیں دریا ہو کر

سرکشی عالم ایجاد میں بیجا ہے اسیرؔ
سینکڑوں خاک میں پنہاں ہوۓ پیدا ہو کر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جانے لگے ہیں اب دم سرد آسماں تلک
ٹھنڈی سڑک بنی ہے یہاں سے وہاں تلک

جلتے ہیں غم سے جان و دل و سینہء و جگر
چاروں طرف ہے آگ بجھاؤں کہاں تلک

بیمار ہو گیا ہوں میں قحطِ شراب سے
للہ لے چلو مجھے پیرِ مغاں تلک

مسجد سے دور ہے یہ دکاں مے فروش کی
آتی نہیں ہے کان میں بانگ اذاں تلک

نکلا جو دم تو راحت و آرام ہے اسیرؔ
آوارگی ہے جسم کی روح رواں تلک
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نبض بیمار جو اے رشکِ مسیحا دیکھی
آج کیا آپ نے جاتی ہوئی دنیا دیکھی

لے چلے باغ جناں میں جو فرشتے ہم کو
دیر تک راہ تری او گل رعنا دیکھی

ہر جگہ وضع نئی چال نئی لوگ نۓ
ہم تو جس شہر میں پہنچے نئی دنیا دیکھی

سب چلے جاتے ہیں کچھ ملکِ عدم دور نہیں
دیکھنا ہم بھی پہنچ جائیں گے دیکھا دیکھی

خندہء گل ہے کہیں نالہء بلبل ہے کہیں
سیر اس گلشن ایجاد میں کیا کیا دیکھی

عشق بازی کی خو یہ ہے کہ لگی دل پہ چوٹ
چلتے پھرتے جو کوئی صورت زیبا دیکھی

دیدہء دل سے نظر کی رخ جاناں پر اسیرؔ
چشم موسٰی سے صفاۓ یدِ بیضا دیکھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…