کیا اِس سے زیادہ پر اثر شاعری اور نغمگی ممکن ھے؟ …


کیا اِس سے زیادہ پر اثر شاعری اور نغمگی ممکن ھے؟

فیض کی اس نظم ”آج بازار میں پا بجولاں چلو“ کو نیرہ نُور نے کمال خوبصورتی سے گایا۔

آپ بھی سنیں۔

آج بازار میں پا بجولاں چلو
چشمِ نَم ، جانِ شوریدہ کافی نہیں
تہمتِ عشق پوشیدہ کافی نہیں

آج بازار میں پابجولاں چلو

دَست اَفشاں چلو ، مَست و رَقصاں چلو
خاکِ برسر چلو ، خُوں بہ داماں چلو
راہ تکتا ھے سب شہرِ جاناں ، چلو

آج بازار میں پابجولاں چلو

حاکمِ شہر بھی ، مجمعِ عام بھی
صُبحِ ناشاد بھی ، روزِ ناکام بھی
تیرِ الزام بھی ، سنگِ دشنام بھی.

اِن کا دم ساز ، اپنے سِوا کون ھے ؟؟
شہرِ جاناں میں اَب با صفا کون ھے ؟؟
دستِ قاتل کے شایاں رھا کون ھے ؟؟

رختِ دل باندھ لو ، دل فگارو چلو
پھر ھمِیں قتل ھو آئیں یارو ، چلو

آج بازار میں پابجولاں چلو

”فیض احمد فیض“

بشکریہ
https://www.facebook.com/Inside.the.coffee.house

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…