یاس، یگانہ، چنگیزی دِل کی ہَوس وہی ہے، مگر دِل نہ…

یاس، یگانہ، چنگیزی

دِل کی ہَوس وہی ہے، مگر دِل نہیں رہا
محمل نَشِیں تو رہ گیا، محمل نہیں رہا

پُہنچی نہ اُڑ کے دامنِ عِصمت پہ گرد تک
اِس خاک اُڑانے کا کوئی حاصِل نہیں رہا

رکھتے نہیں کسی سے تسلّی کی چشم داشت
دِل تک اب اعتبار کے قابل نہیں رہا

آہستہ پاؤں رکھیے قیامت نہ کیجیے
اب کوئی سر اُٹھانے کے قابل نہیں رہا

اِک آخری عِلاج پہ ٹھہرا ہے فیصلہ
بیمار اب اِمتحان کے قابل نہیں رہا

پروانے اپنی آگ میں جَل کر ہُوئے تمام
اب کوئی بارِ خاطرِ محفِل نہیں رہا

یاد آئی بُوئے پَیرَہَنِ یار۔ ناصحا !
اپنا دماغ اب کسی قابل نہیں رہا

تکتے ہیں یاسؔ دُور سے مُنہ آپ کا ہنوز
آنکھیں تو رہ گئیں مگر اب دِل نہیں رہا ​

مِرزا یاس یگانہ چنگیزی


Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…