فیض کے چاھنے والوں کی کمی نہیں لاکھوں نہیں کروڑوں …


فیض کے چاھنے والوں کی کمی نہیں لاکھوں نہیں کروڑوں ھیں۔ ایک یُوسف ابراھیم بھی ھیں۔ آئیں اُن سے فیض کی ایک خُوبصورت نظم سنیں۔

”آج اِک حرف کو ، پھر ڈھونڈتا پھرتا ھے خیال“

آج اِک حرف کو ، پھر ڈھونڈتا پھرتا ھے خیال
مدھ بھرا حرف کوئی ، زھر بھرا حرف کوئی
دل نشیں حرف کوئی ، قہر بھرا حرف کوئی

حرفِ الفت کوئی دل دار نظر ھو جیسے
جس سے ملتی ھے نظر بوسۂ لب کی صُورت
اتنا روشن کہ سر موجۂ زر ھو جیسے

صحبت یار میں آغاز طرب کی صُورت
حرفِ نفرت کوئی شمشیر غضب ھو جیسے
تا اَبد شہرِ ستم جس سے تباہ ھو جائیں

اتنا تاریک کہ شمشان کی شب ھو جیسے
لب پہ لاؤں ، تو مرے ھونٹ سیاہ ھو جائیں

آج ھر سُر سے ھر اِک راگ کا ناتا ٹُوٹا
ڈھونڈتی پھرتی ھے مطرب کو پھر اُس کی آواز
جوششِ درد سے ، مجنوں کے گریباں کی طرح

چاک در چاک ھُوا آج ھر اِک پردۂ ساز
آج ھر موجِ ھَوا سے ، ھے سوالی خلقت
لا کوئی نغمہ ، کوئی صَوت ، تری عمر دراز

نوحۂ غم ھی سہی ، شورِ شہادت ھی سہی
صُورِ محشر ھی سہی ، بانگِ قیامت ھی سہی

”فیض احمّد فیض“

بشکریہ
https://www.facebook.com/Inside.the.coffee.house

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…