موسمِ وصل کے اِمکان میں , رَکھے ھُوئے ھیں کچھ حَسی…

موسمِ وصل کے اِمکان میں , رَکھے ھُوئے ھیں
کچھ حَسیں لوگ ، میرے دھیان میں رَکھے ھُوئے ھیں
تیری آوازوں سے ، تصویروں سے ، تحریروں سے
بھرے فُون آج بھی سامان میں , رَکھے ھُوئے ھیں

”قمرؔ ریاض“


بشکریہ
https://www.facebook.com/Inside.the.coffee.house

جواب چھوڑیں