امیر مینائی کے ضرب المثل اشعار ……… آھوں سے …

امیر مینائی کے ضرب المثل اشعار
………
آھوں سے سوزِ عشق مٹایا نہ جائے گا
پھونکوں سے یہ چراغ بجھایا نہ جائے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھے عیسیٰ ھو مریضوں کا خیال اچھا ھے
ھم مرے جاتے ھیں تم کہتے ھو حال اچھا ھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
امیر اب ھچکیاں آ نے لگی ھیں
کہیں میں یاد فرمایا گیا ھوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گاھے گاھے کی ملاقات ھی اچھی ھے امیر
قدر کھو دیتا ھے ھر روز کا آنا جانا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ھوئے نامور بے نشاں کیسے کیسے
زمیں کھا گئی آسماں کیسے کیسے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کون سئ جا ھے جہاں جلوہ معشوق نہیں
شوق دیدار اگر ھے تو نظر پیدا کر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لطف آنے لگا جفاؤں میں
وہ کہیں مہرباں نہ ھو جائے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قریب ھے یارو روزِ محشر ۔ چھپے گا کشتوں کا خون کیونکر
جو چپ رھے گی زبانِ خنجر ، لہو پکارے گا آستین کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاعر کو مست کرتی ھے تعریفِ شعر امیر
سو بوتلوں کا نشہ ھے اس واہ واہ میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیر کھانے کی ھوس ھے تو جگر پیدا کر
سرفروشی کی تمنا ھے تو سر پیدا کر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیر پہ تیر لگاؤ تمہین ڈر کس کا ھے
سینہ کس کا ھے مری جان جگر کس کا ھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تجھ سے مانگوں میں تجھی کو کہ سبھی کچھ مل جائے
سو سوالون سے یہی ایک سوال اچھا ھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تجھ کو آتا ھے پیار پر غصہ
مجھ کو غصے پہ پیار آتا ھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وصل ھو جائے یہیں حشر میں کیا رکھا ھے
آج کی بات کو کیوں کل پہ اٹھا رکھا ھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وصل کا دن اور اتنا مختصر
دن گنے جاتے تھے اس دن کے لئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زیست کا اعتبار کیا ھے امیر
آدمی بلبلہ ھے پانی کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


جواب چھوڑیں