امیر مینائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آج 21 فروری کلاسکل اردو…

امیر مینائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج 21 فروری کلاسکل اردو ادب کے نامور استاد شاعر اور داغ دہلوی کے ھم عصر امیر مینائی کا یوم پیدائش ھے ۔
تاریخ پیدائش : 21 فروری 1828ء
تاریخ وفات : 13 اکتوبر 1900ء
امیر احمد نام مولوی کرم محمد کے بیٹے اور مخدوم شاہ مینا کے خاندان سے تھے۔ لکھنو میں 21 فروری 1828ء میں پیداہوئے درسی کتب مفتی سعد اللہ اور ان کے ہمعصر علمائے فرنگی محل سے پڑھیں۔ خاندان صابریہ چشتیہ کے سجادہ نشین حضرت امیر شاہ سے بیعت تھی۔ شاعری میں اسیر لکھنوی کے شاگرد ہوئے ۔ 1852ء میں نواب واجد علی شاہ کے دربار میں رسائی ہوئی اور حسب الحکم دو کتابیں شاد سلطان اور ہدایت السلطان تصنیف کیں۔ 1857ء کے بعد نواب یوسف علی خاں کی دعوت پر رامپور گئے۔ ان کے فرزند نواب کلب علی خاں نے اُن کو اپنا استاد بنایا۔ نواب صاحب کے انتقال کے بعد رامپور چھوڑنا پڑا۔ 1900 میں حیدرآباد گئے وہاں کچھ دن قیام کیا تھا۔ کہ بیمار ہوگئے۔ اور وہیں 13 ، اکتوبر 1900ء میں انتقال ھوا ۔
متعدد کتابوں کے مصنف تھے ۔ ایک دیوان غیرت بہارستان ، 1857ء کے ہنگامے میں ضائع ہوا۔ موجودہ تصانیف میں دو عاشقانہ دیوان مراۃ الغیب ، صنم خانہ عشق اور ایک نعتیہ دیوان محمد خاتم النبین ہے۔ دو مثنویاں نور تجلی اور ابرکرم ہیں۔ ذکرشاہ انبیا بصورت مسدس مولود شریف ہے۔ صبح ازل آنحضرت کی ولادت اور شام ابد وفات کے بیان میں ہے۔ چھ واسوختوں کاایک مجموعہ بھی ہے۔ نثری تصانیف میں انتخاب یادگار شعرائے رامپور کا تذکرہ ہے، جو نواب کلب علی خان کے ایما پر 1890ء میں لکھا گیا۔ لغات کی تین کتابیں ہیں۔ سرمہ بصیرت ان فارسی عربی الفاظ کی فرہنگ ہے جو اردو میں غلط مستعمل ہیں۔ بہار ہند ایک مختصر نعت ہے۔ سب سے بڑا کارنامہ امیر اللغات ہے اس کی دو جلدیں الف ممدودہ و الف مقصورہ تک تیار ہو کر طبع ہوئی تھیں کہ انتقال ہوگیا۔
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
امیر مینائی کے ضرب المثل اشعار
——-
آھوں سے سوزِ عشق مٹایا نہ جائے گا
پھونکوں سے یہ چراغ بجھایا نہ جائے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھے عیسیٰ ھو مریضوں کا خیال اچھا ھے
ھم مرے جاتے ھیں تم کہتے ھو حال اچھا ھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
امیر اب ھچکیاں آ نے لگی ھیں
کہیں میں یاد فرمایا گیا ھوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گاھے گاھے کی ملاقات ھی اچھی ھے امیر
قدر کھو دیتا ھے ھر روز کا آنا جانا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ھوئے نامور بے نشاں کیسے کیسے
زمیں کھا گئی آسماں کیسے کیسے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کون سئ جا ھے جہاں جلوہ معشوق نہیں
شوق دیدار اگر ھے تو نظر پیدا کر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لطف آنے لگا جفاؤں میں
وہ کہیں مہرباں نہ ھو جائے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قریب ھے یارو روزِ محشر ۔ چھپے گا کشتوں کا خون کیونکر
جو چپ رھے گی زبانِ خنجر ، لہو پکارے گا آستین کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاعر کو مست کرتی ھے تعریفِ شعر امیر
سو بوتلوں کا نشہ ھے اس واہ واہ میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیر کھانے کی ھوس ھے تو جگر پیدا کر
سرفروشی کی تمنا ھے تو سر پیدا کر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیر پہ تیر لگاؤ تمہین ڈر کس کا ھے
سینہ کس کا ھے مری جان جگر کس کا ھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تجھ سے مانگوں میں تجھی کو کہ سبھی کچھ مل جائے
سو سوالون سے یہی ایک سوال اچھا ھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تجھ کو آتا ھے پیار پر غصہ
مجھ کو غصے پہ پیار آتا ھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وصل ھو جائے یہیں حشر میں کیا رکھا ھے
آج کی بات کو کیوں کل پہ اٹھا رکھا ھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وصل کا دن اور اتنا مختصر
دن گنے جاتے تھے اس دن کے لئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زیست کا اعتبار کیا ھے امیر
آدمی بلبلہ ھے پانی کا


جواب چھوڑیں