محشرؔ بدایونی گر ضربِ مخالفت نہ ہوگی زندہ کبھی شخ…

محشرؔ بدایونی

گر ضربِ مخالفت نہ ہوگی
زندہ کبھی شخصیّت نہ ہوگی

بے راہ رَوی کی راہ چلیے
کوئی بھی مزاحمت نہ ہوگی

کی نقلِ رسُوم بھی تو ہم سے
بس نقلِ منافقت نہ ہوگی

بے سوچے ندائے حق نہیں دی
واقف تھے، کہ خیریت نہ ہوگی

اب چاہے یہ دِن بھی رات بن جائیں!
ظُلمت سے مصالحت نہ ہوگی

جو شہر کی زَمِیں پہ بوئی جائے
اُس فصل سے منفعت نہ ہوگی

کیا سوچ کے گھر بنائیں کم اجر !
دِیواریں ہُوئیں، تو چھت نہ ہوگی

لاکھ آتشِ پا ہے کہ، دَم لو !
توہِینِ مُسافرت نہ ہوگی

ہر شخص کو خوش نہ رکھ سکے ہم
ہم میں وہ صلاحیّت نہ ہوگی

محشرؔ بدایونی


Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…