Warning: Use of undefined constant ‘ALLOW_UNFILTERED_UPLOADS’ - assumed '‘ALLOW_UNFILTERED_UPLOADS’' (this will throw an Error in a future version of PHP) in /home/moazam/public_html/wp-config.php on line 74
بہار بے سپرِ جامِ یار گزرے ہے نسیم تیر سی چھاتی کے... - تفکر ڈاٹ کام

بہار بے سپرِ جامِ یار گزرے ہے نسیم تیر سی چھاتی کے…

بہار بے سپرِ جامِ یار گزرے ہے
نسیم تیر سی چھاتی کے پار گزرے ہے

شراب، حلق سے ہوتی نہیں فرو تجھ بِن
گلوئے خشک سے تیغ آبدار گزرے ہے

گزر مِرا تِرے کوچے میں گو نہیں تو نہ ہو
مِرے خیال میں تُو لاکھ بار گزرے ہے

سمجھ کے قطع کر اب پیرہن مِرا خیّاط
نظر سے چاک کے یاں تار تار گزرے ہے

ہزار حرف شکایت کا، دیکھتے ہی تجھے
زباں پہ شکر ہو بے اختیار گزرے ہے

کہے ہے آج تِرے در پہ اضطرابِ نسیم
کہ اس جہاں سے کوئی خاکسار گزرے ہے

تِری گلی سے گزرتا ہوں اس طرح ظالم
کہ جیسے ریت سے پانی کی دھار گزرے ہے

میں وہ نہیں کہ کوئی مجھ سے مل کے ہو بدنام
نہ جانے کیا تِری خاطر میں یار گزرے ہے

مجھے تو دیکھ کے جوش و خروش سوداؔ کا
اسی ہی سوچ میں فصلِ بہار گزرے ہے

یہ آدمی ہے کہ سر مارتا پھرے ہے بہ سنگ
کہ بادِ تند سوئے کوہسار گزرے ہے

(مرزا رفیع سوداؔ)

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…