آنکھ پھر تیرے خواب سے بھر لُوں یہ پیالہ سراب سے بھ…

آنکھ پھر تیرے خواب سے بھر لُوں
یہ پیالہ سراب سے بھر لُوں

دل میں اندیشۂ فراق آیا
روشنی ، آفتاب سے بھر لُوں

کِس لیے طالبِ ثواب بنوُں ؟؟
سر ، حساب و کتاب سے بھر لُوں

کیسے تجدیدِ کارِ عشق کروں ؟؟
روز و شب پھر عذاب سے بھر لُوں

کامیابی کی راہ پر نکلوں
زندگی اِضطراب سے بھر لُوں

”شاھنواز زیدی“


بشکریہ
https://www.facebook.com/Inside.the.coffee.house

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…