بھگت کبیر سے کسی نے پُوچھا ، ”عشق کیا ھے؟“ بھگت …


بھگت کبیر سے کسی نے پُوچھا ، ”عشق کیا ھے؟“

بھگت کبیر نے جواب دیا ، ”عشق ایسے ھی ھے جیسے کوئی گونگا گڑ کھائے اور ذائقہ نہ بتا سکے۔ عشق کا پہلا قدم اٹھانے سے قبل اپنا ھی سر اپنے قدموں میں کاٹ کر رکھنا پڑتا ھے“۔

سچ کہا گلزار نے کہ صُوفیوں کا کلام گاتے گاتے عابدہ خود صُوفی ھو گئیں۔ آئیں عابدہ سے بھگت کا زندہ جاوید کلام سنیں۔

من لاگو یار فقیری میں
من لاگو یار فقیری میں

جو سکھ پاؤ نام بھجن میں
سو سُکھ ناھیں امیری میں

بھلا بُرا سب کو سُن لیجیو
کر گُذراں غریبی میں

پریم نگر میں رھنی ھماری
بھلی بن آئی صُبُوری میں

ھاتھ میں تمبا بغل میں سوٹا
ھے چھوڑو دشا جگیری میں

آخر یہ تن خاک ملے گا
کہاں پھرتا مغروری میں ؟؟

کہے کبیر سُنو بھائی سادھو
صاحب ملے صُبُوری میں.

”بھگت کبیر“

بشکریہ
https://www.facebook.com/Inside.the.coffee.house

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…