وہی جوشِ حق شناسی وہی عزم بردباری نہ بدل سکا زما…

وہی جوشِ حق شناسی وہی عزم بردباری
نہ بدل سکا زمانہ مری خُوئے وضعداری

وہی مے کدہ ہے لیکن نہیں اب وہ کیف باری
گئے ہم مذاق لے کے مرا لطفِ بادہ خواری

ہو زبان جس کے منہ میں وہ نہ آئے انجمن میں
کہیں رکھ نہ دے ستم گر یہی شرطِ رازداری

کبھی ہنستے ہنستے رونا کبھی روتے روتے ہنسنا
کیا کوئی سمجھ سکے گا بھلا مصلحت ہماری

میں زمانے بھر کے طعنے نہ خموش ہو کے سنتا
جو جنونِ عشق ہوتا مرا فعلِ اختیاری

مئے عاشقی سے توبہ ہے جنونِ پارسائی
کہیں لے نہ ڈوبے واعظ تجھے زعمِ ہوشیاری

نہ پہنچ سکا جہاں تک کبھی پائے کبر و دانش
وہیں جرم لے گئی ہے مجھے میری خاکساری

(جرم محمد آبادی)

المرسل :-: ابوالحسن علی ندوی

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…