ہزار آرائشیں کیجے مگر اچھا نہیں لگتا جودل وحشت بدا…

ہزار آرائشیں کیجے مگر اچھا نہیں لگتا
جودل وحشت بداماں ھو تو گھر اچھا نہیں لگتا

نمائش جسم کی بے پیرھن اچھی نہیں ھوتی
خزاں کے دور میں کوئ شجر اچھا نہیں لگتا

خوشی میں بھی نکل آتے ھیں آخر آنکھ سے آنسو
یہ بے موقع مذاقِ چشمِ تر اچھا نہیں لگتا

سوادِ قریہءِ جاں میں تغیّر بھی ضروری ھے
کوئی موسم ھو لیکن عمر بھر اچھا نہیں لگتا

بچھڑ کرساتھیوں سے زندگی بے کیف ھوتی ھے
اکیلا پر ھوا کے دوش پر اچھا نہیں لگتا

یہ آئینہ ھے سب کے منہ پہ سچی بات کہتا ھے
نگاھیں پھیر لو تم کو اگر اچھا نہیں لگتا

بھلا لگتا ھے جب پھول پھولوں میں رھے شامل
ستارہ آسماں سے ٹوٹ کر اچھا نہیں لگتا

بچاسکتاھےدامن کون فطرت کے تقاضوں سے
کوئی ساتھی نہ ھوجب تک سفر اچھا نہیں لگتا

وہ اپنے ھوں کہ بیگانے سبھی بیزار ھیں مجھ سے
سرِ محفل کوئی شوریدہ سر اچھا نہیں لگتا

حصارِ ذات سے اعجاذ جو باھر نہیں آتے
انہیں کوئی بہ الفاظِ دِگر اچھا نہیں لگتا

……….اعجاز رحمانی……..
سید اعجاز علی رحمانی


Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں
5 تبصرے
  1. گمنام کہتے ہیں

    بہت خوب

  2. گمنام کہتے ہیں

    wah

  3. گمنام کہتے ہیں

    Wahhhhh Wahhhhh
    Bahot khoob 👏 , Janab-e-aali .

  4. گمنام کہتے ہیں

    واہ بہترین

  5. گمنام کہتے ہیں

    خوب

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…