دل کرے گا نہ خیالِ رُخِ جاناں خالی کبھی اس گھر کو …

دل کرے گا نہ خیالِ رُخِ جاناں خالی
کبھی اس گھر کو نہ چھوڑے گا یہ مہماں خالی

روز و شب لاکھوں ہی ارمان بھرے رہتے ہیں
حسرتوں سے نہیں ہوتا دلِ ناداں خالی

باغ میں دیکھ کے تیرے رُخِ رنگیں کی بہار
ہوگئے رنگ سے گُلہائے گلستاں خالی

وصل کا روز میسر نہیں ہوتا آبادؔ
گھر ہمارا نہیں کرتی شبِ ہجراں خالی

( آبادؔ لکھنوی)

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…