تاریخ کا سفر ہے طلسمات کا سفر دیکھا جنہوں نے مُڑ ک…

تاریخ کا سفر ہے طلسمات کا سفر
دیکھا جنہوں نے مُڑ کے وہ پتھر کے ہوگئے

علی مینائی بے حد پڑھا لکھا انسان ہے اور سنسناٹی (امریکہ) کی یونیورسٹی میں سائنس ہی پڑھاتا بھی ہے اور شاید اسی لئے آج کے ادبی ماحول کی مروّجہ چکا چوند اور جوڑ توڑسے نہ متاثر ہے نہ اس کی طرف اسکی کوئی توجہ ہے ۔ خاندان میں شعر کی روایت امیر مینائی سے چلی آرہی ہے جسے اعلیٰ تعلیم ، کھلے ذہن اور سائنس کی ایپلیکیشن نے دو آتشہ کردیا ہے

منتخب اشعار
ہزار اہلِ یقیں کو یقیں نہ آئے مگر
حجابِ دہر یقیں سے نہیں، گماں سے اٹھا

ہوش کی جرآتیں تمام حدِ یقیں پہ رک گئیں
خلوتِ ناز تک تری، صرف مرے گماں گئے
..
پلِ صراطِ گماں پر جو چل نہیں سکتے
حصارِ جہل سے باہر نکل نہیں سکتے

سجا کے بزم میں لایا ہوں میوہ ہائے سخن
یہ پھل ابھی ابھی شاخِ گماں سے اترے ہیں
….
میں اس مھیب حقیقت کے انتظار میں ہوں
غبارِ وہم سے جو ناگہاں ابھرتی ہے
….
یقیں کی بند عمارت میں دم نہ گُھٹ جائے
دریچہ دشتِ گماں کی طرف کھلا رکھئے
…..
ذہن میں ذوقِ گماں کی بھی نہ گنجائش رہے
اس قدر توہینِ آسابِ یقیں مت کیجئے
….
لبالب دیجئیو اک جامِ صہبائے گماں ساقی
کہ ہم میخانۂ اہلِ یقیں سے تشنہ کام آئے
…..
پسِ حجابِ یقیں بھی توہمات ملے
گماں کے بھی پسِ پردہ حقیقتیں نکلیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حِرزِ جاں ہوتی گئی گزرے ہوئے لمحوں کی یاد
آگیا لہجہ میں بھی ماضی تمنائی کا رنگ
۔۔۔۔۔
ہے اک جہانِ طلسمات تیری بزم اے دوست
رہا نہ پھر وہ کہیں کا بھی جو یہاں سے اٹھا
۔۔۔۔۔۔
یہ کائنات عمل کا حساب رکھتی ہے
عذاب صرف دعاؤں سے ٹل نہیں سکتے
۔۔۔۔۔
ٹھہری جو اس حَسیں کے سرہانے ذرا سی دیر
موجِ نفس سے رَم کی ادا لے گئی ہوا
سنتے ہیں یہ کہ قصرِ سلیماں کی خاک کو
آخر اڑا کے سوئے صبا لے گئی ہوا
۔۔۔۔۔
ہمارے عہد میں منجملۂ نجوم سہی
رہا ہے اپنے زمانے میں دیوتا سورج
۔۔۔۔۔
کوچۂ دیدہ وراں میں، درِ تاثیر کے پاس
سیکھنے جائیے آدابِ سخن میر کے پاس
راس آئی نہ رہائی ترے دیوانے کو
دیر تک بیٹھ کے رویا کیا زنجیر کے پہاس
اب مرے شہر کے لوگوں سے لہو مانگے ہے
روشنائی نبہ رہی کاتبِ تقدیر کے پاس
۔۔۔۔۔۔۔
چمک اٹھے ہیں مرے گھر کے بام و در کیسے
یہ تیری یاد ہے یا چاندنی بکھرتی ہے
۔۔۔۔۔
روح سرشار ہے انفاس کی خوشبو سے ابھی
اٹھ کے یہ کون گیا ہے مرے پہلو سے ابھی
کھو گیا ہوں میں اگر خوابِ فراموشی میں
وہ جگا دے گا مجھے لمس کے جادو سے ابھی
بجھ چکا کب کا چراغِ رخِ لیلیٰ لیکن
ـوسعتِ نجد ہے روشن رمِ آہو سے ابھی
دل ازل سے ہے شناسائے مقامِ ہمہ اُوست
عقل فارغ نہیں تاویلِ من و تُو سے ابھی
خاک میں اس کی نہاں لعل و گہر ہیں لاکھوں
ہم تو اٹھنے کے نہیں کوچۂ اردو سے ابھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عشق میں اعجازِ حسنِ نارسائی دیکھئے
پا گئے ہم خود کو اس کی جستجو کرتے ہوئے
۔۔۔۔۔
مسکرا کر ٹال دیجئے داد خواہِ شوق کو
ًہاںً اگر ممکن نہیں ہےتو ً نہیںً مت کیجئے

دیکھئے بس یہ کہ اِذنِ چشمِ جانانہ ہے کیا
عشق ہے تو امتیازِ کفر و دیں مت کیجئے


Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں
1 تبصرہ
  1. گمنام کہتے ہیں

    بہت خوب

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…