پھر اُسی راہ گزر پر ، شاید ھم کبھی مل سکیں گے ، م…

پھر اُسی راہ گزر پر ، شاید
ھم کبھی مل سکیں گے ، مگر شاید

جن کے ھم منتظر رھے اُن کو
مل گئے اور ھمسفر ، شاید

جان پہچان سے بھی کیا ھو گا؟؟
پھر بھی اے دوست ، غور کر شاید

اجنبیت کی دھند چھٹ جائے
چمک اُٹھے ، تیری نظر شاید

زندگی بھر لہو رلائے گی
یادِ یاراںِ ، بے خبر شاید

جو بھی بچھڑے ، وہ کب ملے ھیں فرازؔ ؟؟
پھر بھی تُو ، انتظار کر شاید

"احمد فراز”


بشکریہ
https://www.facebook.com/Inside.the.coffee.house

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں
13 تبصرے
  1. گمنام کہتے ہیں

    Waah

  2. گمنام کہتے ہیں

    Wah

  3. گمنام کہتے ہیں

    مطلع درست کرلیں ۔ یوں ہے
    پھر اُسی رہگزار پر شاید
    ہم کبھی مل سکیں مگر شاید

  4. گمنام کہتے ہیں

    Have you listen it in ghulam Ali voice…? it’s much more beautiful…

  5. گمنام کہتے ہیں

    کوئی تو ہوتا جو چُنتا وجود کے ریزے
    تمام عُمر رہی ہیں یہ حسرتیں مُرشِد
    میثم علی آغا

  6. گمنام کہتے ہیں

    واھ

  7. گمنام کہتے ہیں

    👌

  8. گمنام کہتے ہیں

    Lajawab

  9. گمنام کہتے ہیں

    اب ہر خواہش ہر خیال تمام شد..
    ہجر اپنی جگہ، مگر ملال تمام شد!

    حیا ایشم!

  10. گمنام کہتے ہیں

    ہم کبھی مل سکیں ، مگر شاید

  11. گمنام کہتے ہیں

    واااہ 🌿

  12. گمنام کہتے ہیں

    لاجواب 😍😍

  13. گمنام کہتے ہیں

    ustad ghulam ali ki awaz mn sb zrur sunain

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…