ہنگامِ شرحِ غم، جگر، خامہ شق ہوا سوزِ دروں سے نامہ…

ہنگامِ شرحِ غم، جگر، خامہ شق ہوا
سوزِ دروں سے نامہ کبابِ ورق ہوا

بندہ خدا ہے پھر تو اگر گذرے آپ سے
مرتا ہے جو کوئی اسے کہتے ہیں حق ہوا

دل میں رہا نہ کچھ تو کیا ہم نے ضبطِ شوق
یہ شہر جب تمام لٹا، تب نسق ہوا

وہ رنگ، وہ روش، وہ طرح، سب گئی بباد
آتے ہی تیرے باغ میں منھ گُل کا فق ہوا

برسوں تری گلی میں چمن ساز جو رہا
سو دیدہ اب گداختہ ہوکر شفق ہوا

لے کر زمیں سے تابہ فلک رک گیا ہے آہ
کس دردمندِعشق کو یارب قلق ہوا

اس نو ورق میں میرؔ جو تھا شرح و بسط سے
بیٹھا جو دب کے میں تو ترا اک سبق ہوا

میر تقی میرؔ

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

2 تبصرے
  1. گمنام کہتے ہیں

    لاجواب پیشکش

  2. گمنام کہتے ہیں

    لے کر زمیں سے تا بہ فلک رک گیا ہے آہ
    کس درد مندِ عشق کو یارب قلق ہوا

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…