فراقؔ گورکھپُوری ہجر و وصالِ یار کا پردہ اُٹھا دی…

فراقؔ گورکھپُوری

ہجر و وصالِ یار کا پردہ اُٹھا دیا
خود بڑھ کے عِشق نے مجھے میرا پتا دیا

گرد و غُبارِ ہستیِ فانی اُڑا دیا
اے کیمیائے عِشق مجھے کیا بَنا دیا

وہ سامنے ہے اور نَظر سے چُھپا دیا
اے عِشقِ بے حجاب مجھے کیا دِکھا دِیا

وہ شانِ خامشی کہ بہاریں ہیں مُنتظر
وہ رنگِ گُفتگوُ کہ گُلِستاں کھِلا دِیا

دَم لے رہی تھیں حُسن کی جب سَحر کارِیاں
اُن وقفہ ہائے کُفر کو ،اِیماں بَنا دیا

معلُوم کچھ مُجھی کو ہیں اُن کی رَوانیاں
جِن قطرہ ہائے اشک کو دریا بَنا دِیا

اِک برقِ بے قرار تھی تمکینِ حُسن بھی!
جس وقت عِشق کو غَمِ صبر آزما دِیا

ساقی مُجھے بھی یاد ہیں وہ تِشنہ کامِیاں
جِن کو حَرِیفِ ساغر و مینا بَنا دِیا

معلُوم ہے حَقِیقتِ غم ہائے روزگار
دُنیا کو تیرے درد نے دُنیا بَنا دِیا

اے شوخیِٔ نِگاہِ کَرَم مُدّتوں کے بعد
خوابِ گرانِ غم سے، مجھے کیوں جَگا دِیا

کچھ شَورَشیں تغافُلِ پِنہاں میں تھیں، جنھیں
ہنگامہ زارِ حشرِ تمنّا بَنا دِیا

بڑھتا ہی جا رہا ہے جَمالِ نَظر فَریب
حسُنِ نظر کو، حُسنِ خودآرا بَنا دِیا

پھر ،دیکھنا نِگاہ لَڑِی کِس سے عِشق کی
گر حُسن نے حجابِ تغافُل اُٹھا دیا

جب خُون ہو چُکا دلِ ہستیِ اعتبار
کچھ درد بچ رہے جنھیں انساں بنا دیا

گُم کردۂ وَ فُورِ غَمِ اِنتظار ہُوں
تُو کیا چُھپا، کہ مجھ کو مجھی سے چُھپا دِیا

رات اب حَرِیفِ صُبحِ قیامت ہی کیوں نہ ہو
جو کُچھ بھی ہو اِس آنکھ کو اب تو جَگا دِیا

اب میں ہُوں ، اور لُطف و کَرَم کے تکلّفات
یہ کیوں حجابِ رنجِشِ بے جا بَنا دِیا

تھی یُوں تو شامِ ہِجر ، مگر پچھلی رات کو!
وہ درد اُٹھا فراقؔ، کہ میں مُسکرادیا

فراقؔ گورکھپٗوری


Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں
1 تبصرہ
  1. گمنام کہتے ہیں

    Wah boht awlaaa lajawab behtreen

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…